تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور : 11 دسمبر/ مقبوضہ فلسطین میں مظاہرین نے مسئلہ فلسطین کے بارے ميں سعودی عرب کے بادشاہ اور ولیعہد کی غداری اور خیانت کی بھر پور مذمت کرتے ہوئے سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان اور ولیعہد محمد بن سلمان کی تصویروں کو آگ لگا کر پاؤں تلے رگڑ دیا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ اسلامی جمہوریہ ایران کی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان بعض عرب ممالک  کی ہم آہنگی سے انجام پایا ہے جس کا مقصد عرب - اسرائیل کے تعلقات کو معمول پر لانا اور مسئلہ فلسطین کو سرد خانے میں ڈالنا ہے۔

نیوز نور 11 دسمبر/ فلسطینی وزیرخارجہ نےکہا ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیلی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کئے جانے کے بعد اسرائیل دوسرے ممالک  پر القدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کرانے کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ سعودی عرب کے قریب سمجھے جانے والے پاکستانی اہلسنت عالم دین اور جمعیت علماء اسلام (س) کے سربراہ  نے کہا ہے کہ اسلامی اتحادی افواج کا ڈھونگ رچانے والا شاہ سلمان اب بیت المقدس کو بچائیں۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ امریکی یونیورسٹیوں کے ایک سو بیس یہودی اساتذہ نے ایک شکایت نامے پر دستخط کرکے بیت المقدس کے بارے میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے فیصلے کی مذمت کی ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
دی دُران نیوز کے مدیر اعلیٰ :
سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے

نیوز نور : برطانوی نیوز ایجنسی ’دی دُران‘ کے مدیر اعلیٰ نے کہا ہے کہ سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے آل سعود کو اس بات کی توقع نہ تھی کہ یمنی عوام اپنی مقاومت اور استقامت سے اُسے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگی۔ 

استکباری دنیا صارفین۶۰۴ : // تفصیل

دی دُران نیوز کے مدیر اعلیٰ :

سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے

نیوز نور : برطانوی نیوز ایجنسی ’دی دُران‘ کے مدیر اعلیٰ نے کہا ہے کہ سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے آل سعود کو اس بات کی توقع نہ تھی کہ یمنی عوام اپنی مقاومت اور استقامت سے اُسے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگی۔  

عالمی اردو خبر رساں ادارے ’’نیوز نور‘‘ کی رپورٹ کے مطابق روسی ذرائع ابلاغ کے ساتھ انٹرویو میں ’’الیکزنڈر مٔرکورِس‘‘ نے کہا کہ سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے آل سعود کو اس بات کی توقع نہ تھی کہ یمنی عوام اپنی مقاومت اور استقامت سے اُسے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگی۔  

انہوں نے کہا کہ 2015ء میں جب آل سعود نے یمن پر لشکر کشی کا آغاز کیا اُس وقت اسے اس بات کی امید نہیں تھی کہ یمن جنگ سالوں تک جاری رہنے والی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب آبادی، معیشت ، فوجی اور رقبے کے لحاظ سے یمن سے کئی گنا بڑا ہے اسلئے آل سعود کو یقین تھا کہ وہ ایک ماہ کے اندر اندر ہی یمنی فوج اور حوثیوں کا کام تمام کر کے منصور ہادی کو اقتدار پر دوبارہ قابض کرنے میں کامیاب ہوگی تاہم یمنیوں نے اپنی مقاومت سے سعودیوں کو حیران و خوف زدہ کردیا۔

انہوں نے کہا کہ یمن کی صورتحال بگڑنے کے ساتھ ساتھ ہی یہ جنگ سعودیوں کیلئے ایک خطرناک جنگی دلدل ثابت ہوتا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب یمن میں اسپتالوں ، اسکولوں ، طبی مراکز کو جارحیت کا نشانہ بنا کر اور اس ملک کا ظالمانہ محاصرہ کر کے یمنی عوام سے اپنی شکست کا انتقام لے رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب پر حوثی جنگجوؤں کے بیلسٹک میزائل حملے اور یمن جنگ کا سعودی عرب کے اندر منتقل ہونا آل سعود کیلئے ایک ڈراؤنا خواب ہے۔

الیکزنڈر نے کہا کہ یمن جنگ کو سفارتی طریقے سے حل کرنے کی تمام کوششیں جم گئی ہیں اور تنازعہ کنٹرول سے باہر ہوتا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یمن پر آل سعود کی جارحیت کا اصل ہدف و مقصد اس ملک کی عوام پر اپنی رائے مسلط اور ایران کے اثر و رسوخ کو ختم کرنا تھا۔

یمن کے تباہ کن جنگ میں مغربی ممالک خاص کر امریکہ کے کردار کے بارے میں انہوں نے کہا کہ آل سعود نے یمن پر واشنگٹن کی رضامندی اور گرین سگنل ملنے کے بعد ہی جارحیت کا آغاز کیا۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر