تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور 19جنوری/ہیومن رائٹس واچ کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر نے انسانی حقوق کے حوالے سے امریکی صدر کے کرادار کو تباہ کن قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ ایک ڈکٹیٹر ہیں اور سعودی عرب جیسی غیر جمہوری حکومت کی حمایت کرتے ہیں۔

نیوز نور 19جنوری/لبنانی مسلح افواج کے سربراہ نے کہا ہے کہ ہم اسرائیلی حملوں کا جواب دینے کے لیے تیار ہیں۔

نیوز نور 19جنوری/اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل نے کہا ہے کہ ایران کے جوہری معاہدے کو خطرے میں ڈالنے سے عالمی امن کے لئے مشکل پیدا ہوگی۔

نیوزنور19جنوری/ایک عرب روز نامے نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ سعودی عرب یمن پر مسلط کردہ جنگ کے دلدل میں بری طرح گرفتار ہوگيا ہے اور سعودی عرب کے لئے یمن پر مسلط کردہ جنگ سے نکلنے کا واحد راستہ انصار اللہ سے مذاکرات ہیں۔

نیوزنور19جنوری/اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں نماز جمعہ کے خطیب نے مسئلہ فلسطین اور یمن کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیائے اسلام کو فلسطین اور یمن کے مظلوم عوام کی حمایت کے بارے میں اپنی شجاعت کا مظاہرہ کرنا چاہیے اور حق بات کہنے سے گھبرانا نہیں چاہیے۔

  فهرست  
   
     
 
    
اردنی پارلیمان:
امریکہ امن عمل کا ثالث نہیں بلکہ فریق بن چکاہے

نیوزنور13جنوری/اردنی پارلیمان کی خارجہ امور سے متعلق کمیٹی نے باور کیا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے القدس کو اسرائیل کا دارالحکومت قرار دیے جانے کے بعد امریکہ مشرق وسطیٰ کے امن عمل کا ثالث نہیں بلکہ فریق بن چکا ہے۔

استکباری دنیا صارفین۱۲۴ : // تفصیل

اردنی پارلیمان:

 امریکہ امن عمل کا ثالث نہیں بلکہ فریق بن چکاہے

نیوزنور13جنوری/اردنی پارلیمان کی خارجہ امور سے متعلق کمیٹی نے باور کیا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے القدس کو اسرائیل کا دارالحکومت قرار دیے جانے کے بعد امریکہ مشرق وسطیٰ کے امن عمل کا ثالث نہیں بلکہ فریق بن چکا ہے۔

عالمی اردو خبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق اردنی پارلیمنٹ کی خارجہ کمیٹی کے ارکان نے اردن میں متعین برطانوی سفیر اڈورڈ اوکڈن سے ملاقات کے دوران کہا کہ امریکی صدر کی طرف سے القدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنےکے بعد امریکہ کی غیرجانب دارانہ حیثیت ختم ہوچکی ہے اور وہ اب مسئلے کا فریق بن چکا ہے۔

اردنی ارکان پارلیمان نے صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے اعلان کو غیرانسانی، ظالمانہ اور جابرانہ قرار دیتے ہوئےکہا کہ القدس کو اسرائیل کے حوالے کرنا آسمانی مذاہب کی تعلیمات کی بھی توہین ہے۔

ارکان پارلیمان نے برطانوی سفیر سے مطالبہ کیا کہ وہ مشرق وسطیٰ میں جامع اور دیر پا قیام امن کے لیے اردن کی مساعی کی معاونت کرے۔

اس موقع پر برطانوی سفیر اوکڈن نے کہا کہ ان کے ملک کا القدس کے حوالے سے موقف واضح اور عالمی قراردادوں کے عین مطابق ہےاور ہم القدس کو اسرائیل کے حوالے کرنے کےٹرمپ کے اقدام کو تسلیم نہیں کرتے۔

 انہوں نے کہا کہ برطانیہ  اردنی فرمانروا شاہ عبداللہ دوم کے ساتھ مل کر مشرق وسطیٰ میں امن کی مساعی کو آگے بڑھانے کےلیے ہرممکن اقدامات کرے گا۔

انہوں نے واضح کیا کہ برطانیہ اسرائیل میں اپنا سفارت خانہ القدس منتقل نہیں کرے گا۔

قابل ذکرہے کہ چھ دسمبر2017ء کو امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت قرار دیا تھا جس پر عالمی برادری کی جانب سے شدید رد عمل سامنے آیا ہے اسرائیل اور گوئٹے مالا کے سوا کسی دوسرے ملک نے القدس کے بارے میں امریکی صدر کے اعلان کو تسلیم نہیں کیا ہے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر