تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور :17 نومبر/ میانمار فوج کے سربراہ نے کہاہے کہ بدھ مت کے پیروکاروں کے راضی ہونے تک بنگلادیش ہجرت کر جانے والے روہنگیا مسلمان واپس نہیں آسکتے، روہنگیائی افراد کی اپنے گھروں کی واپسی میانمار کے حقیقی باشندوں کی رضامندی سے ہوگی اور اس مقصدکے لیے سب سے پہلے بدھ پرستوں کو راضی کرنا پڑے گا ۔

نیوز نور :17 نومبر/ عراقی فوج اور سیکورٹی فورس نے مغربی صوبے الانبار کے شہر راوہ کو بھی تکفیری دہشت گرد گروہ داعش کے قبضے سے آزاد کرا لیاہے۔

نیوز نور :17 نومبر/ ترکی کے صدر نے مغربی ممالک پر شامی کردوں کی حمایت پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ جن ممالک نے داعش کو تشکیل دیا تھا وہی آج شام کے کردوں کو مسلح کررہے ہیں۔

نیوز نور :17 نومبر/ تہران کےخطیب جمعہ نے خطے کے حساس شرائط کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہاہےکہ  مسلمانوں کو باہمی اتحاد اور یکجہتی کے ساتھ دشمنوں کے منصوبوں کو ناکام بنانا چاہیے۔

نیوز نور :17 نومبر/ جرمن وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ یورپی ممالک سعودی اقدامات اور مہم جوئی پر کسی بھی صورت میں خاموش نہیں رہیں گے۔

  فهرست  
   
     
 
    
سینئر ترک تجزیہ کار:
قطری بحران کا مقصد شام میں کرد ریاست کے قیام کے منصوبے سے عرب عوام کی توجہ ہٹانا ہے

نیوز نور:ترکی کے ایک سینئر سیاسی تجزیہ کار کہنا ہےکہ بعض خلیجی ممالک اورقطر کے درمیان بڑھتی کشیدگی  کو  ختم کرنے میں ترکی اورروس اہم کردار ادا کرسکتے ہیں کہاہےکہ قطری بحران کا مقصد  عرب جمہوریہ شام میں ایک خودمختار کرد ریاست کے قیام کے منصوبے سے عرب دنیا کی توجہ  ہٹانا ہے۔

استکباری دنیا صارفین۶۱۵ : // تفصیل

سینئر ترک تجزیہ کار:

قطری بحران کا مقصد  شام میں کرد ریاست کے قیام کے منصوبے سے عرب عوام کی توجہ ہٹانا ہے

نیوز نور:ترکی کے ایک سینئر سیاسی تجزیہ کار کہنا ہےکہ بعض خلیجی ممالک اورقطر کے درمیان بڑھتی کشیدگی  کو  ختم کرنے میں ترکی اورروس اہم کردار ادا کرسکتے ہیں کہاہےکہ قطری بحران کا مقصد  عرب جمہوریہ شام میں ایک خودمختار کرد ریاست کے قیام کے منصوبے سے عرب دنیا کی توجہ  ہٹانا ہے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے’’نیوز نور‘‘کی رپورٹ کے مطابق سینئر ترک تجزیہ کار وسابق قانون ساز’’ڈاکٹر اویا اقگونک‘‘نےکہاکہ بعض خلیجی ممالک اورقطر کے درمیان بڑھتی کشیدگی  کو  ختم کرنے میں ترکی اورروس اہم کردار ادا کرسکتے ہیں کہاکہ قطری بحران کا مقصد  عرب جمہوریہ شام میں ایک خودمختار کرد ریاست کے قیام کے منصوبے سے عرب دنیا کی توجہ  ہٹانا ہے۔

انہوں نے کہاکہ ترکی اورروس جیسی اہم طاقتیں  مشرق وسطیٰ علاقے کو  قطر اورسعودی عرب کے درمیان کشیدہ تعلقات سےپیدا ہونے والی خوفناک صورتحال سے نجات دلاسکتے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ مشرق وسطیٰ کی موجوہ صورتحال انتہائی خطرناک ہے جسے مزید خراب ہونے سے روکنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہاکہ  بد قسمتی سےبعض طاقتیں مشرق وسطیٰ علاقے میں افراتفری اورتشدد سے  استفادہ کرنے کی کوشش کررہی ہے۔

انہوں نے شام کی موجودہ صورتحال کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہاکہ  رقہ شہرکی طرف کردوں کی پیشکش خطے میں ایک آزاد کرد ریاست کے قیام کے امریکی منصوبوں کے مطابق ہے۔

 انہوں نے کہاکہ  امریکہ نے مشرق وسطیٰ علاقے کے حوالے سے  بعض منصوبے تیار کئے ہیں جنہیں وہ علاقے میں اسلامی جمہوریہ ایران کے اثرورسوخ کو ختم کرکے ہی عملی جامہ پہنا سکتا ہے اس لئے روس اورترکی ایسی واحد طاقتیں ہیں  جو قطری بحران  کو حل کرنے میں کردار اداکرسکتے ہیں۔

واضح رہےکہ قطر اورخلیجی فارس کے چند رکن ممالک کے درمیان کشیدگی امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے دورۂ ریاض کے بعد  شروع ہوئی ٹرمپ نے اپنے اس دورے سعودی عرب کی علاقائی پالیسیوں سے مکمل طورپر ہم آہنگی کا اظہار کیا اورایک طرح سے انہوں نے قطر کی علاقائی پالیسیوں کے آگے سوالیہ نشان لگایا جس کے خلاف قطری حکام نے اپنا ردعمل ظاہر کیا جو قطر  اورخلیج فارس کے دوسری  بعض ممالک کے درمیان کشیدگی پیدا ہونے پر منتج ہوا ۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر