تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور22جنوری/ ایک صہیونی تجزیہ نگار نےاسرائیلی انٹیلی جنس ادارہ موساد کو تین ہزار بے گناہ فلسطینیوں کا قاتل قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ  ان افراد کو موساد کا نشانہ نہیں بننا چاہیے تھا کیونکہ ان میں سے اکثر بے گناہ تھے۔


نیوزنور22جنوری/ گذشتہ روز اسرائیلی فوج کی بھاری نفری نے قبلہ اول میں گھس کر وہاں پر موجود فلسطینی محکمہ اوقاف کے مقرر کردہ ایک محافظ کو حراست میں لے لیاجس کےنتیجے میں قبلہ اول میں سخت کشیدگی اور فلسطینیوں میں غم وغصہ پایا جا رہا ہے۔

نیوز نور22جنوری/بحرین کے ممتاز شیعہ عالم دین آیت اللہ شیخ عیسیٰ قاسم  کے نمائندے نے آل خلیفہ رژیم  کے وفد کے اسرائیل کے سرکاری دورے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس دورے کا مقصد فلسطینیوں کی قاتل  حکومت کےساتھ تعلقات کو معمول پرلانا ہے ۔

نیوزنور22جنوری/اسرائیلی ذرائع ابلاغ نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ فلسطین کے مقبوضہ مغربی کنارے کے علاقوں میں آباد کیے گئے یہودیوں کی تعداد 2017ء کے آخر میں 4 لاکھ 36 ہزار ہوگئی ہے۔

نیوزنور22جنوری/شام کے صدر نے کہا  ہےکہ ترکی اپنے مخالفین کو کچلنے اور شامی حکومت کے مخالفین کی مدد اور حمایت کرنے میں مصروف ہے۔
  فهرست  
   
     
 
    
اقوام متحدہ:
داعش نےشہر موصل میں 1 لاکھ شہریوں کو انسانی ڈھال بنا رکھا ہے

نیوزنور:اقوام متحدہ نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ دہشت گرد تنظیم داعش نے عراق کے اہم ترین شہر موصل میں 1 لاکھ سے زائد شہریوں کو انسانی ڈھال بنا کر قید کر رکھا ہے۔

استکباری دنیا صارفین۱۸۸ : // تفصیل

اقوام متحدہ:

داعش نےشہر موصل میں 1 لاکھ شہریوں کو انسانی ڈھال بنا رکھا ہے

نیوزنور:اقوام متحدہ نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ دہشت گرد تنظیم داعش نے عراق کے اہم ترین شہر موصل میں 1 لاکھ سے زائد شہریوں کو انسانی ڈھال بنا کر قید کر رکھا ہے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘نےابلاغ نیوز کے حوالے سےنقل کیاہےکہ اقوام متحدہ نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ دہشت گرد تنظیم داعش نے عراق کے اہم ترین شہر موصل میں 1 لاکھ سے زائد شہریوں کو انسانی ڈھال بنا کر قید کر رکھا ہے۔

اس حوالے سے عراق میں پناہ گزینوں کے لیے کام کرنے والے اقوام متحدہ کے ادارے کے نمائندہ برونو گیڈو نے کہا کہ داعش موصل کے باہر ہونے والی جھڑپوں میں شہریوں کو گرفتار کر کے انہیں موصل کے قدیم شہر جانے پر مجبور کر رہی ہے جو ان کے قبضے میں موجود واحد حصہ رہ گیا ہے۔

جنیوا میں صحافیوں سے گفتگو میں انہوں نے کہا کہ موصل کے قدیم شہر میں اب بھی 1 لاکھ سے زائد شہری قید ہو سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ شکست کے بعد داعش جن جن علاقوں سے نکلی وہاں سے اس نے شہریوں کو اپنے ساتھ لے کر موصل منتقل کر دیا۔

نمائندہ اقوام متحدہ کے مطابق یہ شہری وہاں انسانی ڈھال کی صورت میں موجود ہیں علاقے میں کھانا، پانی، بجلی کچھ باقی نہیں رہا، یہ افراد ایک ایسے علاقے میں موجود ہیں جہاں دہشت اور مفلسی کی صورتحال بدترین ہوتی جا رہی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ یہ لوگ چاروں جانب جنگ سے گھرے ہوئے ہیں۔

برونو گیڈو کانے کہا کہ داعش کے کنٹرول میں موجود علاقے سے نکلنے کی کوشش کرنے والے افراد کو اسنائپرز قتل کرنے کے لیے تیار رہتے ہیں جبکہ جو چند افراد نکلنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں وہ شدید صدمے اور تشدد کا شکار ہوتے ہیں۔

واضح رہے کہ 9 ماہ قبل موصل سے داعش کا قبضہ ختم کرنے کے لیے شروع ہونے والی کارروائیوں میں شہر سے 8 لاکھ 62 ہزار سے زائد افراد دربدر ہو چکے ہیں۔

ان افراد میں سے صرف 1 لاکھ 95 ہزار افراد پرامن علاقوں تک پہنچنے میں کامیاب ہو سکے، جبکہ 6 لاکھ 67 ہزار کے قریب افراد اب بھی دربدر ہیں۔

ان میں سے زیادہ تر افراد کا تعلق موصل کے مغربی علاقوں سے ہے،یہ افراد اقوام متحدہ کی جانب سے لگائے گئے کیمپوں اور میزبان خاندانوں کے ساتھ زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر