تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور:ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ میانمار کی فوج نے روہنگیا مسلمانوں کا قتل عام منظم منصوبہ بندی کے تحت کیا ہے۔

نیوزنور:ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکی صدر نے اپنی حالیہ ایران مخالف تقریر سے پورے ایران کو متحد کر دیا اور یہ بات ہمارے لئے باعث خوشی ہے۔

نیوزنور:ترکی کے صدر نے کہا ہے کہ ایران کے خلاف پابندیاں عائد کرنے والے اپنی ایٹمی سرگرمیوں پر نظرڈالیں، ایران کے خلاف پابندیاں عائد کرنے کی حمایت صرف اسرائیل کررہا ہے۔

نیوزنور:اقوام متحدہ میں فلسطین کے مستقل مندوب نے کہا ہےکہ سلامتی کونسل نے اسرائیل کے سامنے خود کو مفلوج ثابت کیا ہے۔

نیوزنور:امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے کے ڈائریکٹر نے خبردار کیا ہے کہ شمالی کوریا امریکہ کو جوہری میزائل سے نشانہ بنانے کی صلاحیت حاصل کرنے کے قریب ہے۔


  فهرست  
   
     
 
    
جمہوریت کا مطالبہ کرنے کے جرم میں سعودی عرب کے ایک طالب علم کو پھانسی کا حکم

نیوزنور:سعودی ظالم حکام نے مجتبی نادر السکویت نام کے ایک طالب علم کو جمہوریت کے مطالبے کے لیے ہونے والے مظاہروں میں شرکت کرنے کے جرم میں پھانسی دینے  کا حکم دے دیا  ہے۔

استکباری دنیا صارفین۵۸۴ : // تفصیل

جمہوریت کا مطالبہ کرنے کے جرم میں سعودی عرب کے ایک طالب علم کو پھانسی کا حکم

نیوزنور:سعودی ظالم حکام نے مجتبی نادر السکویت نام کے ایک طالب علم کو جمہوریت کے مطالبے کے لیے ہونے والے مظاہروں میں شرکت کرنے کے جرم میں پھانسی دینے  کا حکم دے دیا  ہے۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنور نے عربی ٹی وی "العالم " کے نیوز پورٹل کے حوالے سے خبر دی ہے کہ سعودی عرب کے ایک طالب علم مجتبی نادر السکویت کا پانچ سال پہلے سال ۲۰۱۳ ۔ ۲۰۱۴ میں ویسٹرن میشیگان یونیورسٹی میں ایڈمیشن ہوا یونیکورسٹی میں جانے کے لیے دسمبر ۲۰۱۲ میں اس نے اس یونیورسٹی کو دیکھنے کے لیے ایک سفر کیا ۔ لیکن ہوائی جہاز پر سوار ہونے سے پہلے کہ جو ملک فہد ہوائی اڈے سے میشیگان کی طر جانے والا تھا ، سعودی سیکیوریٹی فورسز نے اس کو گرفتار کر لیا ۔

بحرین میں انسانی حقوق اور ڈیموکریسی ،کی ویبسایٹ ، اے ڈی ایچ آر بی نے لکھا ہے کہ مجتبی اور ۱۳ دوسرے افراد کو جمہوریت کے لیے ہونے والے مظاہروں میں شرکت کے شک کی بنا پر اسی سال پھانسی کا حکم دے دیا ۔

سعودی حکومت کے حکام نے مجتبی کو شہر دمام کے عمومی جیل خانے میں منتقل کر دیا ۔ یہ وہ جگہ تھی کہ جہاں اس جوان کو جب وحشتناک سزائیں دی گئیں تو مجبور ہو کر اس نے خود پر لگائے گئے جھوٹے الزام کو تسلیم کر لیا ۔ سیکیوریٹی فورسز نے کیبل ، پائپ  اور جوتوں سے مجتبی کو بہت  پیٹا اور سیگریٹ سے اس کے بدن کو جلایا ۔ شکنجے میں کسنے کے نتیجے میں اس کا کاندھا ٹوٹ گیا ۔ اس وقت اس قیدی کو کمر ، پاوں اور معدہ میں طرح طرح کی تکلیفوں کا سامنا ہے ، لیکن اس کے باوجود جیل کے حکام نے اس کو علاج معالجے کی سہولت سے محروم کر رکھا ہے ۔ 

مجتبی نے سال ۲۰۱۲ ۔۲۰۱۳ کی سردیوں کو قید تنہائی میں بسر کیا ۔ تا کہ وہ اس کے بعد مظاہروں کے بارے میں سوچنے کی جرائت بھی نہ کرے ۔ اور قید کا ایک سال گذرنے کے بعد اس کو عدالت میں مقدمہ چلانے کے لیے پیش کیا گیا ۔

مجتبی اپنی تعلیم کو جاری رکھنا چاہتا ہے لیکن عدالت اس کو موت کی طرف لے جا رہی ہے ۔ سعودی حکام نے اس جوان کے گھر وال؛وں کو اسے کتابیں دینے سے منع کر دیا ہے اور اس سے ملاقات بھی نہیں کرنے دیتے ۔

قید میں چند سال گذارنے کے بعد سعودی عرب کی ایک عدالت نے جون ۲۰۱۶ میں مجتبی کو پھانسی دیے جانے کا حکم صادر کر دیا اور سعودی عرب کی جرائم کی عدالت نے ۲۵ مئی ۲۰۱۷ کو اس کے حکم کی تائیید کر دی ۔ اب مجتبی اپنے خلاف صادر کیے گئے حکم پر عمل درآمد کے انتظار میں ہے ۔سعودی حکام نے اسی مہینے میں ۱۰ افراد کو دو دن میں تلوار کے ذریعے موت کی سزا دی ہے ۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر