تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور : 11 دسمبر/ مقبوضہ فلسطین میں مظاہرین نے مسئلہ فلسطین کے بارے ميں سعودی عرب کے بادشاہ اور ولیعہد کی غداری اور خیانت کی بھر پور مذمت کرتے ہوئے سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان اور ولیعہد محمد بن سلمان کی تصویروں کو آگ لگا کر پاؤں تلے رگڑ دیا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ اسلامی جمہوریہ ایران کی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان بعض عرب ممالک  کی ہم آہنگی سے انجام پایا ہے جس کا مقصد عرب - اسرائیل کے تعلقات کو معمول پر لانا اور مسئلہ فلسطین کو سرد خانے میں ڈالنا ہے۔

نیوز نور 11 دسمبر/ فلسطینی وزیرخارجہ نےکہا ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیلی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کئے جانے کے بعد اسرائیل دوسرے ممالک  پر القدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کرانے کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ سعودی عرب کے قریب سمجھے جانے والے پاکستانی اہلسنت عالم دین اور جمعیت علماء اسلام (س) کے سربراہ  نے کہا ہے کہ اسلامی اتحادی افواج کا ڈھونگ رچانے والا شاہ سلمان اب بیت المقدس کو بچائیں۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ امریکی یونیورسٹیوں کے ایک سو بیس یہودی اساتذہ نے ایک شکایت نامے پر دستخط کرکے بیت المقدس کے بارے میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے فیصلے کی مذمت کی ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
امریکی تجزیہ کار:
پابندیاں حکومتوں کے بجائے عام رعایا کیلئے پریشانی کا سبب/جنگی جرائم کے طورپر ان کی درجہ بندی از حد ضروری ہے

نیوز نور:امریکہ کے ایک سیاسی تجزیہ نگار نے کہاہے کہ کسی ملک پر پابندیاں عائد کرنے سے وہاں کی عام رعایا آلام ومصائب میں مبتلا ہوتی ہےاوران پابندیوں سے  ملک کی قیادت زیادہ متاثر نہیں ہوتی ہےاس لئے پابندیوں کی جنگی جرائم کے طورپردرجہ بندی لازمی ہے۔

استکباری دنیا صارفین۲۹۴ : // تفصیل

امریکی تجزیہ کار:

پابندیاں حکومتوں کے بجائے عام رعایا کیلئے پریشانی کا سبب/جنگی جرائم کے طورپر ان کی درجہ بندی از حد ضروری ہے

نیوز نور:امریکہ کے ایک سیاسی تجزیہ نگار نے کہاہے کہ کسی ملک پر پابندیاں عائد کرنے سے وہاں کی عام رعایا آلام ومصائب میں مبتلا ہوتی ہےاوران پابندیوں سے  ملک کی قیادت زیادہ متاثر نہیں ہوتی ہےاس لئے پابندیوں کی جنگی جرائم کے طورپردرجہ بندی لازمی ہے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے ’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق امریکی تجزیہ کار ’’ریچرڈ بیکر‘‘نے روسیہ الیوم کےساتھ انٹرویو میں گذشتہ ہفتے  اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرف سےمیزائل ٹسٹ کی بنا پر شمالی کوریا کے خلاف متفقہ طورپر پابندیاں عائد کرنے  اوراقوام متحدہ میں امریکی سفیر نکی ہیلی کے اس بیان کہ شمالی کوریا میزائل پروگرام  نہ صرف خطرناک ہے بلکہ غیر ذمہ دارانہ ہے اوران حرکات سے یہ بات واضح ہوجاتی ہےکہ شمالی کوریا امن پسند دنیا کاحصہ  نہیں بننا چاہتا ہےپر تبصرہ کرتے ہوئے کہاکہ  اقوام متحدہ کی طرف سے شمالی کوریا پر عائد کردہ نئی پابندیوں سے اس ملک کی قیادت زیادہ متاثر نہیں ہوگی  بلکہ ان پابندیوں کا سب سے برُا اثر عام رعایا پر ہی پڑےگا  اسلئے پابندیوں کی جنگی جرائم کے طورپر درجہ بندی کرنا لازمی ہے۔

انہوں نے کہاکہ بدقسمتی سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے امریکی قرارداد کو منظور کیا ہے جس کی وجہ سے جزیرہ نما کوریا میں پھیلی کشیدگی کے حقائق پر پردہ ڈالا جارہاہے ۔

انہوں نے کہاکہ امریکی سفیر نکی ہیلی شمالی کوریا کی طرف سے اشتعال انگیز اقدامات کی باتیں کررہی ہے لیکن ہرسال امریکی اورجنوبی کوریائی  ہزاروں لاکھوں فوجیں شمالی کوریا میں حکومت کو تبدیل کرنے کے ارادے سے کوریائی جزیرے میں بیجا مداخلت کررہی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ امریکی صدر جارج ڈبلیو بش نے ۲۰۰۲ ء میں ایران ،عراق اورشمالی کوریا کو شیطانیت کامحور قراردیا تھا لیکن  اگلے سال ۲۰۰۳ء میں اسی امریکی شیطان نے عراق پر حملہ کرکے اسے تباہ وبرباد کردیا  تو اسی وجہ سے شمالی کوریا اپنے ایٹمی پروگرام کو اعلیٰ درجہ تک پہنچانے کی کوشش کررہاہے۔

موصوف تجزیہ نگار نے اس سوال کہ کیا یہ  پابندیاں گذشتہ پابندیوں سے زیادہ سخت ہیں اورکیا پابندیاں  شمالی کوریا کو ایٹمی پروگرام بند کرنے پر مجبور کرسکتی ہیں  کے جواب میں کہاکہ اگر ہم تاریخ پر نظر ڈالیں گے تو شمالی کوریا اپنےجوہری پروگرام کو بند نہیں کرسکتا ہے کیونکہ اگر وہ ایسا کرتا ہے تو امریکہ کو اس ملک کی قیادت کو کچلنے میں آسانی ہوگی ۔

انہوں نے کہاکہ اقوام متحدہ کی طرف سے شمالی کوریا پر عائد کردہ پابندیوں کا سب سے زیادہ اثرعام رعایا پر ہی پڑےگا کیونکہ جدید زمانے میں پابندیوں کو جس طرح سے استعمال کیا جارہاہے وہ بہت ہی بھیانک ہے کیونکہ جب امریکیوں نے عراق میں  لاکھوں افراد کو موت کے گھاٹ اُتار دیا تو اس وقت عراق پر پابندیاں عائد تھیں  اورہلاکتوں سے زیادہ ان پابندیوں سے ملک میں عام رعایا بدترین مصیبت میں مبتلا ہوئی ۔

ریچرڈ بیکر نے مزید کہاکہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرف سے شمالی کوریا پر  عائد کردہ پابندیوں سے  اس ملک کی قیادت اثر انداز نہیں ہوگی بلکہ کوریا کی عوام کو ان پابندیوں کا خمیازہ بھگتنا پڑےگا۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر