تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور : 11 دسمبر/ مقبوضہ فلسطین میں مظاہرین نے مسئلہ فلسطین کے بارے ميں سعودی عرب کے بادشاہ اور ولیعہد کی غداری اور خیانت کی بھر پور مذمت کرتے ہوئے سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان اور ولیعہد محمد بن سلمان کی تصویروں کو آگ لگا کر پاؤں تلے رگڑ دیا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ اسلامی جمہوریہ ایران کی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان بعض عرب ممالک  کی ہم آہنگی سے انجام پایا ہے جس کا مقصد عرب - اسرائیل کے تعلقات کو معمول پر لانا اور مسئلہ فلسطین کو سرد خانے میں ڈالنا ہے۔

نیوز نور 11 دسمبر/ فلسطینی وزیرخارجہ نےکہا ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیلی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کئے جانے کے بعد اسرائیل دوسرے ممالک  پر القدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کرانے کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ سعودی عرب کے قریب سمجھے جانے والے پاکستانی اہلسنت عالم دین اور جمعیت علماء اسلام (س) کے سربراہ  نے کہا ہے کہ اسلامی اتحادی افواج کا ڈھونگ رچانے والا شاہ سلمان اب بیت المقدس کو بچائیں۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ امریکی یونیورسٹیوں کے ایک سو بیس یہودی اساتذہ نے ایک شکایت نامے پر دستخط کرکے بیت المقدس کے بارے میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے فیصلے کی مذمت کی ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
ترک صحافی:
اسد مخالف فورسز پر لگام لگا کر انقرہ کو آفرین آپریشن کیلئے دمشق حکومت کی حمایت حاصل ہوگی

نیوز نور: ترکی کے ایک سینئر صحافی کے مطابق انقرہ حکومت شمال مشرقی شام میں کردش وائی پی جی ملیشیا کے خلاف ایک وسیع آپریشن شروع کرنے کا من بناچکی ہے اوراسے ممکنہ طورپر دمشق کی حمایت بھی حاصل ہوگی لیکن بدلے میں اسے ادلب یا شام میں کہیں اورحکومت مخالف تکفیری گروہوں کو ترک کرنا پڑےگا۔

استکباری دنیا صارفین۱۴۵ : // تفصیل

ترک صحافی:

اسد مخالف فورسز پر لگام لگا کر انقرہ کو آفرین آپریشن کیلئے دمشق حکومت کی حمایت حاصل ہوگی

نیوز نور: ترکی کے ایک سینئر صحافی کے مطابق انقرہ حکومت شمال مشرقی شام میں کردش وائی پی جی ملیشیا کے خلاف ایک وسیع آپریشن شروع کرنے کا من بناچکی ہے اوراسے ممکنہ طورپر دمشق کی حمایت بھی حاصل ہوگی لیکن بدلے میں اسے ادلب یا شام میں کہیں اورحکومت مخالف تکفیری گروہوں کو ترک کرنا پڑےگا۔

عالمی اردوخبررساں ادارے ’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق مقامی میڈیا کےساتھ انٹرویو میں ترک صحافی ’’بوراک بیراختار‘‘نےکہاکہ انقرہ حکومت شمال مشرقی شام میں کردش وائی پی جی ملیشیا کے خلاف ایک وسیع آپریشن شروع کرنے کا من بناچکی ہے اوراسے ممکنہ طورپر دمشق کی حمایت بھی حاصل ہوگی لیکن بدلے میں اسے ادلب یا شام میں کہیں اورحکومت مخالف تکفیری گروہوں کو ترک کرنا پڑےگا۔

انہوں نےکہاکہ ترکی شام کے شمال مشرق میں اسٹریٹجک آفرین علاقے جو وائی پی جی ملیشیا کے زیر کنٹرول ہے میں ایک وسیع فوجی آپریشن شروع کرنے جارہی ہے۔

انہوں نے کہاکہ ترکی کے کائلیس اورشام کے آزاد صوبے میں مسلسل وسیع پیمانے پر فوجی نقل وحرکت دیکھی جارہی ہے ۔

انہوں نے کہاکہ انقرہ حکومت کو دمشق حکومت کی طرف سے گرین سگنل مل سکتی ہے اگر وہ  شام میں سرگرم حکومت مخالف فورسز پر دباؤ ڈالنے میں کامیاب ہوتی ہے۔

انہوں نے کہاکہ اس طرح سے شامی فوج کو ادلب جیسے علاقے سےاپنی فورسز دوبارہ منظم کرنے میں مدد ملےگی اوردیرا زور میں سرگرم داعش کے خلاف پیش قدمی کی جاسکتی ہے۔

انہوں  نے کہاکہ میرا عقیدہ ہےکہ روس کہ جس کے انقرہ اوردمشق کےساتھ قریبی تعلقات ہیں کی ثالثی سے ترک اورشامی قیادت کےدرمیان رابطہ قائم کیاجا رہاہے۔

 انہوں نے کہاکہ گذشتہ ماہ سے اس بات کا مشاہد ہ کرچکے ہیں کہ  شامی فوج  اوران کے اتحادی روسی فضائیہ کی مدد سے دیر ازور کی اورپیش قدمی کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ شامی فوج کو اپنی پوزیشن مزید مضبوط بنانے کیلئے دیرا زور میں سیف زونز کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہاکہ اگرچہ ادلب صوبے پر ترکی کا مسلسل تسلط نہیں ہے تاہم اس علاقے میں اس کی پوزیشن اتنی مضبوط ہے جو مذکورہ علاقے کی صورتحال پر اثرانداز ہوسکتی ہے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر