تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور:1932 ء میں سعودی عرب کے قیام کے بعد سے آل سعود نے بادشاہت کے متضاد سیاسی ،سماجی اورمذہبی ڈھانچے کے چلینجز سے نمٹنے کیلئے وہابیت کا استعمال کیا ہے اوروہابیت کے نظرئے نے مذہبی طورپر آل سعود خاندان کی طاقت تاج اورحکومت کو جائز ٹھہرایا ہے۔

نیوز نور : بولویا کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ امریکہ کو وینزوئلا میں مداخلت کا خیال ترک کرنا چاہئے کیونکہ دنیا بھر میں امریکی سامراجیت دم توڑ چکی ہے۔

نیوز نور:ایران کے ایک سینئر قانون ساز نے کہاہےکہ امریکہ کی طرف سے روس اورایران پر  بیک وقت پابندیوں کو عائد کئے جانے کا مقصد دوعلاقائی اتحادیوں کے درمیان تعلقات میں شگاف پیدا کرنا تھا۔

نیوز نور:لبنان کی اسلامی تحریک مقاومت حزب اللہ کی سیکورٹی کونسل کےچیئرمین نے کہاہے کہ شام میں سرگرم تکفیری دہشتگرد گروہ داعش کے خلاف جنگ آخری مرحلے میں داخل ہوچکی ہے۔

نیوز نور : لبنان کے پارلیمانی نمائندے نے کہا ہے کہ  شام فلسطین اور بیت المقدس کی حمایت کا علمبردار ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
ترک صحافی:
اسد مخالف فورسز پر لگام لگا کر انقرہ کو آفرین آپریشن کیلئے دمشق حکومت کی حمایت حاصل ہوگی

نیوز نور: ترکی کے ایک سینئر صحافی کے مطابق انقرہ حکومت شمال مشرقی شام میں کردش وائی پی جی ملیشیا کے خلاف ایک وسیع آپریشن شروع کرنے کا من بناچکی ہے اوراسے ممکنہ طورپر دمشق کی حمایت بھی حاصل ہوگی لیکن بدلے میں اسے ادلب یا شام میں کہیں اورحکومت مخالف تکفیری گروہوں کو ترک کرنا پڑےگا۔

استکباری دنیا صارفین۱۱۴ : // تفصیل

ترک صحافی:

اسد مخالف فورسز پر لگام لگا کر انقرہ کو آفرین آپریشن کیلئے دمشق حکومت کی حمایت حاصل ہوگی

نیوز نور: ترکی کے ایک سینئر صحافی کے مطابق انقرہ حکومت شمال مشرقی شام میں کردش وائی پی جی ملیشیا کے خلاف ایک وسیع آپریشن شروع کرنے کا من بناچکی ہے اوراسے ممکنہ طورپر دمشق کی حمایت بھی حاصل ہوگی لیکن بدلے میں اسے ادلب یا شام میں کہیں اورحکومت مخالف تکفیری گروہوں کو ترک کرنا پڑےگا۔

عالمی اردوخبررساں ادارے ’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق مقامی میڈیا کےساتھ انٹرویو میں ترک صحافی ’’بوراک بیراختار‘‘نےکہاکہ انقرہ حکومت شمال مشرقی شام میں کردش وائی پی جی ملیشیا کے خلاف ایک وسیع آپریشن شروع کرنے کا من بناچکی ہے اوراسے ممکنہ طورپر دمشق کی حمایت بھی حاصل ہوگی لیکن بدلے میں اسے ادلب یا شام میں کہیں اورحکومت مخالف تکفیری گروہوں کو ترک کرنا پڑےگا۔

انہوں نےکہاکہ ترکی شام کے شمال مشرق میں اسٹریٹجک آفرین علاقے جو وائی پی جی ملیشیا کے زیر کنٹرول ہے میں ایک وسیع فوجی آپریشن شروع کرنے جارہی ہے۔

انہوں نے کہاکہ ترکی کے کائلیس اورشام کے آزاد صوبے میں مسلسل وسیع پیمانے پر فوجی نقل وحرکت دیکھی جارہی ہے ۔

انہوں نے کہاکہ انقرہ حکومت کو دمشق حکومت کی طرف سے گرین سگنل مل سکتی ہے اگر وہ  شام میں سرگرم حکومت مخالف فورسز پر دباؤ ڈالنے میں کامیاب ہوتی ہے۔

انہوں نے کہاکہ اس طرح سے شامی فوج کو ادلب جیسے علاقے سےاپنی فورسز دوبارہ منظم کرنے میں مدد ملےگی اوردیرا زور میں سرگرم داعش کے خلاف پیش قدمی کی جاسکتی ہے۔

انہوں  نے کہاکہ میرا عقیدہ ہےکہ روس کہ جس کے انقرہ اوردمشق کےساتھ قریبی تعلقات ہیں کی ثالثی سے ترک اورشامی قیادت کےدرمیان رابطہ قائم کیاجا رہاہے۔

 انہوں نے کہاکہ گذشتہ ماہ سے اس بات کا مشاہد ہ کرچکے ہیں کہ  شامی فوج  اوران کے اتحادی روسی فضائیہ کی مدد سے دیر ازور کی اورپیش قدمی کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ شامی فوج کو اپنی پوزیشن مزید مضبوط بنانے کیلئے دیرا زور میں سیف زونز کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہاکہ اگرچہ ادلب صوبے پر ترکی کا مسلسل تسلط نہیں ہے تاہم اس علاقے میں اس کی پوزیشن اتنی مضبوط ہے جو مذکورہ علاقے کی صورتحال پر اثرانداز ہوسکتی ہے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر