تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور : 11 دسمبر/ مقبوضہ فلسطین میں مظاہرین نے مسئلہ فلسطین کے بارے ميں سعودی عرب کے بادشاہ اور ولیعہد کی غداری اور خیانت کی بھر پور مذمت کرتے ہوئے سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان اور ولیعہد محمد بن سلمان کی تصویروں کو آگ لگا کر پاؤں تلے رگڑ دیا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ اسلامی جمہوریہ ایران کی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان بعض عرب ممالک  کی ہم آہنگی سے انجام پایا ہے جس کا مقصد عرب - اسرائیل کے تعلقات کو معمول پر لانا اور مسئلہ فلسطین کو سرد خانے میں ڈالنا ہے۔

نیوز نور 11 دسمبر/ فلسطینی وزیرخارجہ نےکہا ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیلی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کئے جانے کے بعد اسرائیل دوسرے ممالک  پر القدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کرانے کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ سعودی عرب کے قریب سمجھے جانے والے پاکستانی اہلسنت عالم دین اور جمعیت علماء اسلام (س) کے سربراہ  نے کہا ہے کہ اسلامی اتحادی افواج کا ڈھونگ رچانے والا شاہ سلمان اب بیت المقدس کو بچائیں۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ امریکی یونیورسٹیوں کے ایک سو بیس یہودی اساتذہ نے ایک شکایت نامے پر دستخط کرکے بیت المقدس کے بارے میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے فیصلے کی مذمت کی ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
ٹائمز آف اسرائیل کی تحلیل:
حزب اللہ کے خوف سے اسرائیل عرسال معرکے میں کودنے سے باز رہا

نیوز نور:ٹائمز آف اسرائیل نے اپنے ایک تحلیل میں لکھاہےکہ نیتن یاہو رژیم نے عرسال  معرکے میں حزب اللہ کے خلاف تکفیری دہشتگرد گروہ جبہت النصرہ کی بھرپور حمایت کرنے کا منصوبہ  تیار کیاتاہم مقاومتی تحریک کے انتباہ کے بعدرژیم کو اپنا منصوبہ ترک کرنا پڑا ۔

استکباری دنیا صارفین۵۲۶ : // تفصیل

ٹائمز آف اسرائیل کی تحلیل:

حزب اللہ کے خوف سے اسرائیل عرسال معرکے میں کودنے سے باز رہا

نیوز نور:ٹائمز آف اسرائیل نے اپنے ایک تحلیل میں لکھاہےکہ نیتن یاہو رژیم نے عرسال  معرکے میں حزب اللہ کے خلاف تکفیری دہشتگرد گروہ جبہت النصرہ کی بھرپور حمایت کرنے کا منصوبہ  تیار کیاتاہم مقاومتی تحریک کے انتباہ کے بعدرژیم کو اپنا منصوبہ ترک کرنا پڑا ۔

عالمی اردوخبررساں ادارے ’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق ٹائمز آف اسرائیل نے لکھا: نیتن یاہو رژیم نے عرسال  معرکے میں حزب اللہ کے خلاف تکفیری دہشتگرد گروہ جبہت النصرہ کی بھرپور حمایت کرنے کا منصوبہ کیاتاہم مقاومتی تحریک کے انتباہ کے بعدرژیم کو اپنا منصوبہ ترک کرنا پڑا ۔

تل ابیب کی طرف سے جبہت النصرہ کو حمایت کے منصوبے کا مقصد حزب اللہ کو زیادہ سے زیادہ چوٹ پہنچانا اورا س سے 2006ء کی 33 روزہ جنگ کی شکست کا انتقام لینا تھا تاہم حزب اللہ کی طرف سے سخت وارننگ کہ جسے بیروت میں تعینات  جرمن سفارتکار کے ذریعے پہنچایا گیا تل ابیب  کو لبنان آپریشن  ترک کرنا پڑا۔

بیروت میں حزب اللہ اورجرمن سفارتکار کے درمیان ہونے والی ملاقات میں تحریک مقاومت نے واضح الفاظ میں کہاکہ عرسال اورشام کی کلامون پہاڑیوں کی مکمل آزادی حزب اللہ کا اسٹریٹجی ایجنڈا ہے اوراس آپریشن میں اسرائیل کی کسی بھی طرح کی مداخلت کو دہشتگردوں کی براہ راست حمایت تصورکیاجائےگا۔

حزب اللہ نے اس ملاقات میں صیہونی حکومت کو جرمن سفیر کے ذریعے یہ پیغام دیا کہ عرسال آپریشن میں اسرائیل کی مداخلت حزب اللہ کے خلاف جنگ کا اعلان ہوگا۔

 حزب اللہ عہدیدار نے  اس ملاقات میں تاکید کی کہ ہم دہشتگرد گروہوں کے خلاف برسرپیکار ہیں اوراگر غاصب صیہونی رژیم کسی بھی جارحانہ رویہ کا ارتکاب کرتی ہے تو اسے پھر تحریک مقاومت کے حیرت انگیز ردعمل کا سامنا کرنا پڑےگا۔

حزب اللہ نے جرمن سفارتکار کےساتھ اس ملاقات میں کہاکہ 2006ء کی 33 روزہ جنگ کے نتائج سے غاصب صیہونی رژیم پوری طرح آگاہ ہے اورآج  اسرائیل کا ذرہ ذرہ مقاومت کے میزائلوں کی زد میں ہے۔

حزب اللہ کے انتباہ کے بعد اسرائیل کی سیکورٹی کابینہ نے اتفاق سے یہ فیصلہ کیاکہ عرسال میں حزب اللہ کے خلاف جبہت النصرہ کی حمایت کا پروگرام منسوخ کیاجانا چاہئے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر