تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور21فروری/شامی ذرایع ابلاغ نے اپنی ایک رپورٹ میں کہاہے کہ شامی فوج کے خلاف مغربی حمایت یافتہ دہشتگرد عناصر نے نئی سازش کا آغاز کیا ہے جس کے تحت کلورین گیس سے بھرے تین ٹرکوں کو ترکی سے شامی علاقے ادلیب میں پہنچا دیا گیا ہے۔

نیوزنور21 فروری/اسرائیلی پارلیمنٹ کینیسٹ کے ایک رکن نے  کہا ہے کہ  اسرائیلی دائیں بازو کےساتھ سعودیہ کا اتحاد شرمناک ہے اورصیہونی وزیر اعظم  کو حزب اللہ اورمقاومت سے خوف ہے۔

نیوزنور21فروری/فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ نے کہا ہے کہ آج فلسطین میں قبضے اور اس کے عوام پر جو حالات گزر رہے ہیں اس کا ذمے دار برطانیہ ہے۔

نیوزنور21فروری/اقوام متحدہ میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے مندوب نے جوہری معاہدے کو کامیاب مذاکرات کرنے کے لئے مثالی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ دوسروں پر پابندیاں لگانے کے نشے میں دھت ہے۔

نیوزنور21فروری/اقوام متحدہ کے کوآرڈینیٹر برائے امور مشرق وسطٰی نےناجائز صہیونی ریاست کے غاصب حکمرانوں پر زور دیا ہے کہ وہ فلسطین میں معصوم عوام کے گھروں اور اسکولوں کو تباہ کرنے کا سلسلہ بند کریں۔

  فهرست  
   
     
 
    
دی دُران نیوز کے مدیر اعلیٰ :
سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے

نیوز نور : برطانوی نیوز ایجنسی ’دی دُران‘ کے مدیر اعلیٰ نے کہا ہے کہ سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے آل سعود کو اس بات کی توقع نہ تھی کہ یمنی عوام اپنی مقاومت اور استقامت سے اُسے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگی۔ 

استکباری دنیا صارفین۶۳۶ : // تفصیل

دی دُران نیوز کے مدیر اعلیٰ :

سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے

نیوز نور : برطانوی نیوز ایجنسی ’دی دُران‘ کے مدیر اعلیٰ نے کہا ہے کہ سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے آل سعود کو اس بات کی توقع نہ تھی کہ یمنی عوام اپنی مقاومت اور استقامت سے اُسے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگی۔  

عالمی اردو خبر رساں ادارے ’’نیوز نور‘‘ کی رپورٹ کے مطابق روسی ذرائع ابلاغ کے ساتھ انٹرویو میں ’’الیکزنڈر مٔرکورِس‘‘ نے کہا کہ سعودی عرب یمن کے خطرناک جنگی دلدل میں بُری طرح پھنس چکا ہے آل سعود کو اس بات کی توقع نہ تھی کہ یمنی عوام اپنی مقاومت اور استقامت سے اُسے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کردیگی۔  

انہوں نے کہا کہ 2015ء میں جب آل سعود نے یمن پر لشکر کشی کا آغاز کیا اُس وقت اسے اس بات کی امید نہیں تھی کہ یمن جنگ سالوں تک جاری رہنے والی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب آبادی، معیشت ، فوجی اور رقبے کے لحاظ سے یمن سے کئی گنا بڑا ہے اسلئے آل سعود کو یقین تھا کہ وہ ایک ماہ کے اندر اندر ہی یمنی فوج اور حوثیوں کا کام تمام کر کے منصور ہادی کو اقتدار پر دوبارہ قابض کرنے میں کامیاب ہوگی تاہم یمنیوں نے اپنی مقاومت سے سعودیوں کو حیران و خوف زدہ کردیا۔

انہوں نے کہا کہ یمن کی صورتحال بگڑنے کے ساتھ ساتھ ہی یہ جنگ سعودیوں کیلئے ایک خطرناک جنگی دلدل ثابت ہوتا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب یمن میں اسپتالوں ، اسکولوں ، طبی مراکز کو جارحیت کا نشانہ بنا کر اور اس ملک کا ظالمانہ محاصرہ کر کے یمنی عوام سے اپنی شکست کا انتقام لے رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب پر حوثی جنگجوؤں کے بیلسٹک میزائل حملے اور یمن جنگ کا سعودی عرب کے اندر منتقل ہونا آل سعود کیلئے ایک ڈراؤنا خواب ہے۔

الیکزنڈر نے کہا کہ یمن جنگ کو سفارتی طریقے سے حل کرنے کی تمام کوششیں جم گئی ہیں اور تنازعہ کنٹرول سے باہر ہوتا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یمن پر آل سعود کی جارحیت کا اصل ہدف و مقصد اس ملک کی عوام پر اپنی رائے مسلط اور ایران کے اثر و رسوخ کو ختم کرنا تھا۔

یمن کے تباہ کن جنگ میں مغربی ممالک خاص کر امریکہ کے کردار کے بارے میں انہوں نے کہا کہ آل سعود نے یمن پر واشنگٹن کی رضامندی اور گرین سگنل ملنے کے بعد ہی جارحیت کا آغاز کیا۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر