تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور : 11 دسمبر/ مقبوضہ فلسطین میں مظاہرین نے مسئلہ فلسطین کے بارے ميں سعودی عرب کے بادشاہ اور ولیعہد کی غداری اور خیانت کی بھر پور مذمت کرتے ہوئے سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان اور ولیعہد محمد بن سلمان کی تصویروں کو آگ لگا کر پاؤں تلے رگڑ دیا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ اسلامی جمہوریہ ایران کی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان بعض عرب ممالک  کی ہم آہنگی سے انجام پایا ہے جس کا مقصد عرب - اسرائیل کے تعلقات کو معمول پر لانا اور مسئلہ فلسطین کو سرد خانے میں ڈالنا ہے۔

نیوز نور 11 دسمبر/ فلسطینی وزیرخارجہ نےکہا ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرائیلی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کئے جانے کے بعد اسرائیل دوسرے ممالک  پر القدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کرانے کے لیے دباؤ ڈال رہا ہے۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ سعودی عرب کے قریب سمجھے جانے والے پاکستانی اہلسنت عالم دین اور جمعیت علماء اسلام (س) کے سربراہ  نے کہا ہے کہ اسلامی اتحادی افواج کا ڈھونگ رچانے والا شاہ سلمان اب بیت المقدس کو بچائیں۔

نیوز نور : 11 دسمبر/ امریکی یونیورسٹیوں کے ایک سو بیس یہودی اساتذہ نے ایک شکایت نامے پر دستخط کرکے بیت المقدس کے بارے میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے فیصلے کی مذمت کی ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
استاد انصاریان کی یوکرین کے اسقف اعظم کے ساتھ ملاقات ؛
اسلام اور عیسائیت کے مابین ارتباط ثقافت کے منتقل کرنے سے اور زیادہ مضبوط ہو گا

نیوزنور: اسلام تمام ادیان منجملہ عیسائيت کے ساتھ صلح و محبت  کا رشتہ رکھنا چاہتا ہے ، اسلام کے نزدیک عیسی علیہ السلام خدا کے رسول اور حضرت مریم  دنیا کی تاریخ میں پاک ترین خاتون ہیں ۔

دینی و مذھبی رواداری صارفین۱۸۱۳ : // تفصیل

استاد انصاریان کی یوکرین کے اسقف اعظم کے ساتھ ملاقات ؛

اسلام اور عیسائیت کے مابین ارتباط ثقافت کے منتقل کرنے سے اور زیادہ مضبوط ہو گا

نیوزنور: اسلام تمام ادیان منجملہ عیسائيت کے ساتھ صلح و محبت  کا رشتہ رکھنا چاہتا ہے ، اسلام کے نزدیک عیسی علیہ السلام خدا کے رسول اور حضرت مریم  دنیا کی تاریخ میں پاک ترین خاتون ہیں ۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنور کی رپورٹ کے مطابق ایران کے شہرہ آفاق مبلغ اسلام و مفسر قرآن حضرت آیت اللہ شیخ حسین انصاریان نے یوکرین کے اسقف اعظم کے ساتھ ملاقات میں جو شہر کیف میں منعقد ہوئی اظہا رخیال کیا : یہ جماعت جو ایران سے ہے جنابعالی کے ساتھ ملاقات کی وجہ سے بہت خوش  ہے اور ہم امید رکھتے ہیں کہ یہ ملاقات اسلام اور عیسائيت  کے مابین تعاون و تعامل کے بڑھنے کا ایک نیا باب قرار پائے گی ۔

علوم و معارف قرآن کریم کے اس محقق و ریسرچ اسکالر نے مزید کہا ؛ ہم مسلمان قرآن کریم کی آیا ت اور پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ہدایات کے مطابق ، لازم ہے کہ حضرت عیسی علیہ السلام اور حضرت مریم پر ایمان اور عقیدہ رکھیں اور یہ عقیدہ رکھیں کہ حضرت عیسی علیہ السلام خدا کے رسول ہیں اور حضرت مریم دنیا کی پاک ترین  خواتین میں شمار ہوتی ہیں ۔

آپ نے کہا ؛ اگر ہم عیسی علیہ السلام پر ایمان نہ رکھیں اور ان کو خدا کا رسول نہ مانیں  تو قرآن مجید کی نظر میں ہم مسلمان نہیں ہیں ۔ اس لیے کہ خدا کے انبیا میں سے ایک عظیم پیغمبر کو ہم نے نہیں مانا ہے ۔

صدر اسلام کے مسلمانوں کو عیسائیت اور حبشہ کے بادشاہ کا ایک خوشگوار واقعہ یاد ہے ،

اس مفسر قرآن کریم نے یاد دلایا : پیغمبر کے زمانے میں اسلام کے ساتھ عیسائیت کے ایک خوشگوار سلوک کے بارے میں ہم مسلمانوں  کو اچھی طرح یاد ہے ، اس لیے کہ مکہ میں جب پیغمبر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر ایمان لانے والوں کو اذیتوں کا شکا ر بنایا جانے لگا تو انہوں نے آنحضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے حکم سے حبشے کی طرف ہجرت کی وہاں اس وقت ایک عیسائی بادشاہ کی حکومت تھی جس نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ماننے والوں کا اچھی طرح استقبال کیا ۔

کتاب تفسیر حکیم کے مصنف نے بیان کیا : پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے بعد ہمراہی اور آپسی تعاون کا یہ سلسلہ اب بھی باقی ہے  لیکن ہم مسلمان ان حکومتوں سے کہ جو خود  کو عیسائی کہتی ہیں لیکن انہوں نے مسلمان ملتوں کو ظلم کا نشانہ بنایا ہے  خوش نہیں ہیں اور ہم ان حکومتوں کو عیسائی نہیں مانتے ۔

قرآن مجید اصلی عیسائیوں کو با محبت اور با اخلاق مانتا ہے ،

استاد انصاریان نے تصریح کی : قرآن مجید واقعی عیسائیوں کو با محبت افراد اور اخلاق کے اعتبار سے نرم خو مانتا ہے ، اور ان کو دشمن قرار نہیں دیتا ، یہودیوں  کے برخلاف کہ قرآن مجید ان کو سخت دل اور مسلمانوں کا دشمن مانتا ہے ۔

آپ نے یاد دلایا : اصلی عیسائی آیات الہی کے مطابق نرم اخلاق اور محبت کی وجہ سے بڑی قیمت رکھتے ہیں لیکن یورپی اور امریکی حکومتیں عیسائی ہوتے ہوئے جن اعمال کی مرتکب ہوتی ہیں وہ قابل قبول نہیں ہیں اور ہمارے نزدیک وہ عیسائی نہیں ہیں بلکہ ان کا شمار ظالموں کے جرگے میں ہوتا ہے ۔

حوزے کے اس استاد نے بتایا : حضرت عیسی علیہ السلام اور پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ماننے والوں کو چاہیے کہ اپنے اپنے دین میں رہتے ہوئے اس طرح ایک دوسرے کے ساتھ مل کر زندگی بسر کریں کہ دونوں کے پیغمبروں  کی شخصیت اور آبرو محفوظ رہے ۔

انہوں نے بیان کیا : میں ایک مسلمان کے عنوان سے کہ جس نے اب تک ۱۴۰ جلد کتابیں اخلاق روابط اجتماعی اور خانوادگی  کے بارے میں لکھی ہیں ، میں  نے ہر جگہ پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی طرح حضرت عیسی علیہ السلام کا تذکرہ کیا ہے  اور آپ کی تعلیمات کو اپنی کتابوں میں بیان کیا ہے ۔

دین اسلام اسلحے ، شمشیر اور جنگ کا دین نہیں ہے ،

استاد حسین انصاریان نے بیان کیا :مستشرقین نے جو جھوٹ پرمبنی باتیں اپنی کتابوں میں لکھی ہیں ،ان کے بر خلاف  دین اسلام ، جنگ اسلحے اور شمشیر کا دین نہیں ہے بلکہ صلح و آشتی اور تمام انسانوں کے ساتھ روابط اور  محبت کا دین ہے ، البتہ ظالمین اور دشمنوں کے مقابلے میں وہ اپنا دفاع کرتا ہے اور اپنے حقوق کے پایمال ہونے کی اجازت نہیں دیتا ۔

آپ نے ایک داستانی روایت کی طرف اشارہ کیا : منقول ہے کہ ہمارے ایک امام ، حضرت جعفر صادق علیہ السلام ایک بیابان سے  مدینے کی جانب جا رہے  تھے، ایک شخص کو دیکھا کہ پیاس کے مارے اس کی جان نکلی جا رہی ہے امام سواری پر تھے آپ نے دیکھا کہ جب تک میں اترتا دیر ہو جائے گی آپ نے پیدل چلنے والے ایک شخص سے کہا کہ اس کے منھ میں پانی ڈالو ، اس شخص نے کہا کہ میں اس کو جانتا ہوں یہ ایک عیسائی ہے امام نے فرمایا کہ ہم پر واجب ہے کہ ہر ایک کی مدد کریں ۔

استاد حوزہ علمیہ نے آگے امیر المومنین علیہ السلام سے ایک روایت نقل کرتے ہوئے بیان کیا : امام علی علیہ السلام نے اپنی حکومت کے دور میں ایک راستے پر ایک بوڑھے عیسائی کو دیکھا کہ بھیک مانگ رہا ہے حضرت اس چیز کو دیکھ کر دکھی ہوئے اور پوچھا کہ تم کیا کام کرتے تھے ؟ اس نے کہا ، میں آپ کے بیت المال میں خزانہ داری کا کام کرتا تھا بوڑھا ہونے کی وجہ سے مجھے نکال دیا گیا ہے، امام نے حکم دیا کہ اس عیسائی کو تا حیات بیت المال سے تنخواہ دی جائے ۔

استاد انصاریان نے یاد دلایا ؛ جس شخص نے دنیا میں پینشن کی بنیاد ڈالی ہے وہ حضرت علی ہیں کہ جنہوں نے ایک عیسائی کے احترام میں اس کی بنیاد رکھی تھی ۔

علی مع الحق والحق  مع علی  نامی بیش قیمت کتاب کے مصنف نے یاد دلایا : ہمارے دین کی ستم سے دوری اختیار کرنے سے محبت کی شدت کا یہ عالم ہے  کہ امام علی علیہ السلام نے نہج البلاغہ میں کہ جو ممکن ہے کہ آپ کے گھر میں بھی موجود ہو اور اس کتاب میں  ۱۲۰۰ سال پہلے حضرت علی علیہ السلام کے خطبوں ، حکمتوں اور تقریروں کو اکٹھا کیا گیا ہے ، فرماتے ہیں : اگر تمام آسمانو ں  کو مجھے دے دیں اور اس کے بدلے میں مجھ سے کہیں کہ میں جو کے چھلکے  کو چیونٹی کے منھ سے چھین لوں تو میں ایسا نہیں کروں گا ۔

ثقافت کے انتقال سے اسلام اور عیسائيت کے درمیان روابط مضبوط ہو سکتے ہیں ،

استاد حوزہ علمیہ نے یوکرین کے اسقف اعظم سے خطاب کرتے ہوئے کہا : ہمیں جناب عالی سے امید ہے کہ اپنے زیر نظر روحانیوں کو بتائیں کہ دین اسلام دین محبت ہے دین جنگ اور اسلحہ نہیں ہے ، اس پیغام کو یوکرین کے عیسائیوں تک پہنچائیں اور کہیں کہ ہمارے اور مسیحیت کے درمیان زیادہ رابطہ برقرار ہو اس لیے کہ ثقافت کے انتقال سے یہ رابطہ زیادہ مضبوط ہو گا ۔

آپ نے اظہار کیا : ہمیں آپ سے کہ آپ عیسائیوں کی ایک نامور شخصیت ہیں توقع ہے کہ اپنے علم اور اپنی آگاہی سے خدا اور حضرت عیسی  کے سامنے جو آپ کی بھاری ذمہ داری ہے اپنے افکار و نظریات کو جو اسلام اور مسیحیت کے بارے میں ہیں ایک خط کے ذریعے جو عیسائیوں کے تمام فرقوں کے نام ہو  پہنچائیں ۔

ایک خط کے ذریعے عیسائی حکومتوں کی طرف سے ظلم و ستم کو روکیں ،

استاد انصاریان نے تاکید کی : چونکہ دنیا آپ کے خط کی اہمیت کو سمجھتی ہے ، اسی لیے مشرق و مغرب سے ایک گروہ کو اپنی سربراہی میں منتخب کریں اور ان حکومتوں کے سربراہوں سے  جو عیسائی ہیں اور دنیا میں انہوں نے ظلم کا بازار گرم کر رکھا ہے ، ملاقات کریں تا کہ ان کے مظالم کی روک تھام ہو سکے یقینا اس کام کا اثر ہو گا اور وہ بھی اسے قبول کریں گے ۔           


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر