تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور:یمن کی وزارت صحت نے اعلان کیا ہے کہ  سعودی جارحیت کے سبب ہیضے میں مبتلا افراد کی تعداد آٹھ لاکھ سے زیادہ ہو گئی ہے جس میں اب تک دو ہزار افراد جاں بحق ہو چکے ہیں۔

نیوزنور:اسلامی جمہوریہ ایران کی تشخیص مصلحت نظام کونسل کے سیکریٹری نے کہا ہے کہ ایران میزائلی صلاحیتوں کے بارے میں کوئی مذاکرات نہیں کرے گا۔

نیوزنور:بحرین میں انسانی حقوق اور جمہوریت کے لئے صلح نامی ایک ادارے کے سربراہ نے کہا ہے کہ گذشتہ سات برسوں میں آل خلیفہ حکومت نے پندرہ ہزار بحرینی شہریوں کو گرفتار کر کے جیل میں قید کیا ہے۔

نیوزنور:فرانس کے صدر نے کہا ہے کہ ایٹمی سمجھوتے کو بچانے کے لئے یورپ اپنی تمام تر کوششیں بروئےکار لائے گا۔

نیوزنور: مسجد اقصیٰ کے خطیب نے فلسطینی قوم کے خلاف صہیونی ریاست کے مظالم کی شدید مذمت کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ القدس شہر کو صہیونی دشمن کی جانب سے منظم جارحیت کاسامنا ہےاس لئے یکجہتی، اتحاد اور اتفاق فلسطینی قوم کے پاس اپنے سلب شدہ حقوق کے حصول کے لیے ایک موثر ہتھیار ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
مرثیہ خوانوں اور حسینی عزاداروں کو آیۃ اللہ العظمی سیستانی کی ہدایت ؛
مجالس وقت کے تقاضے کے مطابق ہوں ، ذاکرین منزلت و مقام اہل بیت(ع) کی حفاظت کریں ، عزاداری میں بدعت سے دوری اختیار کریں

نیوزنور:رسولخدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے تیسرے وصی حضرت امام حسین علیہ السلام کے منبر کا پیغام یہ ہے کہ عوام کو آگاہی اور علم کی روشنی میں مخاطب قرار دیا جائے ، اس طرح کہ محرم کے ایام سے علمی منطق اور مضبوط عقلی اور نقلی دلیلوں کی روشنی میں  مذہب مسلک اہل بیت علیہم السلام کے حقائق اور اصول  کو بیان  کرنے میں استفادہ کیا جائے ۔

اسلامی بیداری صارفین۱۷۵۶ : // تفصیل

 مرثیہ خوانوں اور حسینی عزاداروں کو آیۃ اللہ العظمی سیستانی کی ہدایت ؛

مجالس وقت کے تقاضے کے مطابق ہوں ، ذاکرین منزلت و مقام اہل بیت(ع) کی حفاظت کریں ، عزاداری میں بدعت سے دوری اختیار کریں

نیوزنور:رسولخدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے تیسرے وصی حضرت امام حسین علیہ السلام کے منبر کا پیغام یہ ہے کہ عوام کو آگاہی اور علم کی روشنی میں مخاطب قرار دیا جائے ، اس طرح کہ محرم کے ایام سے علمی منطق اور مضبوط عقلی اور نقلی دلیلوں کی روشنی میں  مذہب مسلک اہل بیت علیہم السلام کے حقائق اور اصول  کو بیان  کرنے میں استفادہ کیا جائے ۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنور کی  رپورٹ کے مطابق حضرت آیۃ اللہ العظمی سیستانی نے نجف اشرف عراق سے ایک پیغام میں محرم ۱۴۳۹ کی آمد کے موقعے پر مبلغوں ، خطیبوں ، مرثیہ خوانوں اور عزاداروں کو مخاطب قرار دیتے ہوئے اپنی ہدایات  جاری کی ہیں جن کو ان کے نمایندے حجۃ السلام و المسلمین سید مرتضی کشمیری نے منتشر کیا ہے ، اس پیغام کے متن کا ترجمہ درج ذیل ہے :

بسم اللہ الرحمان الرحیم ،

ایک بار پھر روز عاشورا اور سید الشہداء امام حسین علیہ السلام کے عظیم اور بے مثال انقلاب کی یاد کا دن آن پہنچا ہے ۔وہ امام کہ جوظلم و طاغوت کے خلاف جنگ  و جہاد اور فداکاری اور جانثاری جیسہی اعلی قدروں اور عزت و کرامت کا بلند ترین نمونہ ہے ، آج ہم ایک ایسی دائمی اور جاویدانی واقعے کی یاد منانے جارہے ہیں کہ جو مکتب اہل بیت  ع کے احیاء کے سلسلے میں اہم ترین مسائل کی یاد دلاتا ہے ، وہ اہل بیت کہ جن کی محبت اور اطاعت اور ان کے سامنے سر تسلیم خم کرنے کو خدا وند کریم نے ہم پر واجب قرار دیا ہے۔

 ضرورت ہے کہ مجالس وقت کے تقاضوں کے مطابق ہوں  اور اس دور کے شبہات پر توجہ دی جائے ،

امام حسین علیہ السلام کے منبر کا پیغام یہ ہے کہ عوام کو آگاہی اور علم کی روشنی میں مخاطب قرار دیا جائے ، اس طرح کہ محرم کے ایام سے علمی منطق اور مضبوط عقلی اور نقلی دلیلوں کی روشنی میں  مذہب و مسلک اہل بیت علیہم السلام کے حقائق اور اصول  کو بیان  کرنے میں استفادہ کیا جائے ۔

۱ ۔یہاں میں چاہتا ہوں کہ خطباء و مبلغین اور محترم اہل منبر حضرات کی توجہ اس طرف مبذول کروں کہ امت اسلامی کی جوان نسل کی ایک بڑی تعداد ، چاہے وہ لڑکے ہوں یا لڑکیاں ، اصول اعتقادات اور ضروریات مذہب و دین  میں سرکش شبہات کی موج کے سامنے اور الحادی افکار سے مملو فضا میں  کھڑے ہیں ، لہذا مجالس میں اس فضا پر خاص توجہ دی جائے اور صحیح اور حق پر مبنی اعتقادات کی محکم دلیلوں کی روشنی میں تشریح کی جائے اور اس راہ میں نسل جوان پر اثر انداز ہونے والے وسایل سے کہ جو موجودہ کلچر کے متناسب ہو ں استفادہ کیا جائے ، اور غیر مناسب گفتگو اور ماضی کی تاریخ کو کریدنے سے پرہیز کیا جائے ۔ دوسری طرف مناسب ہے کہ ہر خطیب اپنی توانائی اور مہارت کے مطابق طرح طرح کے مسائل کو تاریخ کے سلسلے میں ، اور عبرت آموز واقعات اور نافذ اور موئثر پند اور موعظے کو ، اور مبتلاء بہ شرعی احکام کو اور خانوادے سے متعلق تربیتی مسائل کو بیان کرے ۔

مرثیہ خوان اور مداحی کرنے والے اہل بیت ع کی شان اور مجالس حسینی کی شان کی حفاظت کریں ، 

۲ ۔ ایک سب سے اہم طریقہء عزاداری کہ جس کا جوان نسل پر بہت اثر مرتب ہوتا ہے وہ عزاداری کی انجمنیں ہیں ، اس بنا پر مدح سرائی کرنے والوں اور شاعروں کے کاندھوں پر کہ خدا وند عالم ان کی توفیقات میں اضافہ کرے ایک بہت بڑی شرعی ذمہ داری عاید ہوتی ہے ، اور وہ ذمہ داری یہ ہے کہ ایسے اشعار پر توجہ مرکوز رکھیں کہ جو اہل بیت عصمت علیھم السلام کے مقام والا اور احترام کو بیان کرتے ہوں ، اور ان کے اشعار ایسے نہ ہوں کہ جو اہل بیت علیھم السلام کے مقام و مرتبے کے شایان شان نہ ہوں ، یا دلوں میں ان کی قداست اور ان کے مرتبے کے مخدوش ہونے کا باعث ہوں ، اس سلسلے میں لازمی ہے کہ اشعار کے علاوہ ایسے لحن و سبک  سے پرہیز کیا جائے کہ جو لہو و طرب کی مجالس کے مانند ہوتے ہیں ، اور ایسا کام نہ کیا جائے  کہ جو اہل بیت ع  کے بلند و بالا مقام  کے مخدوش ہونے کا باعث بنے ، یا جس سے دشمنوں کے ہاتھ میں کوئی بہانہ لگے ، یا مومنوں کو اس سے کوئی ضرر اور نقصان ہو ۔ کوشش کی جائے کہ جو اشعار پڑھے جاتے ہیں وہ اہل بیت ع کی تعلیمات پر مشتمل ہوں ، اس لیے کہ حدیث میں آیا ہے : اگر لوگ ہمارے کلام کی خوبصورتی کو جان لیں تو ہماری پیروی کرنے لگیں گے ، ان سب کے علاوہ ان دنوں میں پیغمبر ص کی عترت کے مصائب کے ذکر پر توجہ دینا بھی ضروری ہے ۔

لوگ عزاداری کے پروگراموں میں زیادہ سے زیادہ  شرکت کریں اور بدعتوں سے دوری اختیار کریں ،

۳ ۔ تمام مسلمانوں اور خاص کر حسینی عزاداروں سے توقع ہے کہ وہ نمایاں اور بھاری تعداد میں عزاداری میں شرکت کریں ، اور ان عظیم ایام میں عزاداروں کے جم غفیر کے ساتھ ملحق ہو جائیں اور ان رسموں میں شرکت کریں کہ جو قدیم زمانے سے اہل بیت ع کی محبت اور دوستی کی عکاس ہیں اور سید الشہداء ع کے عزاداروں کے درمیان حاضر ہوں اور ایسے اعمال سے پرہیز کریں کہ شریعت میں جن کی کوئی بنیاد نہیں ہے اور ایسا کوئی کام نہ کریں کہ جس سے مسلمان عزاداری سے بھاگ جائیں یا مجالس سے محروم ہو جائیں ۔ اور جو کام شعائر حسینی سے مناسبت نہ رکھتے ہوں ۔

خدا وند متعال سے دعا ہے کہ وہ سب کو شعائر اہل بیت اور ان کے مکتب کو بہترین طریقے سے احیاء کرنے کی توفیق  عنایت کرے ، اور عترت کی ہدایت کی راہ میں قدم رکھنے اور اس پرڈٹے رہنے  کی اور اس خاندان کی ہمیشہ خدمت کرنے کی اور ان کی شفاعت سے بہرہ مند ہونے کی توفیق ہم سب کو عطا فرمائے ۔

عظم اللہ اجورنا و اجورکم بمصاب ابی عبد اللہ الحسین ،

والسلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ

موئسسہء امام علی لندن ، ۱۸ ذی الحجہ ۱۴۳۸ ، ۲۰ ستمبر ، ۲۰۱۷ ،    

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر