تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور:13 دسمبر/ نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے بین الاقوامی امور اور قوانین نے تہران میں مغربی ایشیا کی علاقائی سیکورٹی پر منعقدہ قومی سمینار کے موقع پر صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ ملکی دفاعی اور میزائل پروگرام پر مذاکرات کی ہرگز گنجائش نہیں ہے ۔

 نیوزنور:13 دسمبر/ اقوام متحدہ کے ایک رکن کا کہنا ہے کہ اس وقت یمن میں 8 ملین انسان سنگین قحط کا شکار ہیں

نیوزنور:13 دسمبر/عراقی حزب اللہ نے اعلان کیا ہے کہ فلسطینی علاقوں کوصیہونی قبضے سے آزاد کرانے کیلئے وہ غاصب  اسرائیل کےساتھ جنگ کو مکمل طورپر آمادہ ہے۔

نیوز نور:13 دسمبر/ مصر ی دارالفتویٰ نے اپنے ایک بیان میں خبردار کیا ہے  کہ قدس کے نام پر داعش جوانوں کو بھرتی کے لیے گمراہ کرسکتی ہے۔

نیوز نور:13 دسمبر/ فلسطین میں انسانی حقوق کے لئے سرگرم ذرائع کا کہنا ہے کہ پچھلے پانچ دنوں کے دوران حراست میں لئے جانے والے بیت المقدس کے باسیوں میں سے ایک تہائی حصہ کم عمر بچوں کا ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
ایرانی اسکالر:
ایران جوہری معاہدے سے دستبرداری عالمی اسٹیج پر امریکی اعتمادیت کو کمزور کردےگی

نیوزنور:  اسلامی جمہوریہ ایران کے ایک اسکالر اورسابق مذاکرات کار نے کہاہےکہ جامع مشترکہ ایکشن پلان سے دستبرداری عالمی اسٹیج پر امریکی ساکھ کو کمزور کرسکتی ہے۔

استکباری دنیا صارفین۸۴ : // تفصیل

ایرانی اسکالر:

ایران جوہری معاہدے سے دستبرداری عالمی اسٹیج پر امریکی اعتمادیت کو کمزور کردےگی

نیوزنور:  اسلامی جمہوریہ ایران کے ایک اسکالر اورسابق مذاکرات کار نے کہاہےکہ جامع مشترکہ ایکشن پلان سے دستبرداری عالمی اسٹیج پر امریکی ساکھ کو کمزور کرسکتی ہے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق  ایرانی اسکالر وسابق مذاکرات کار ’’سید حسین موسویان‘‘نےمقامی ذرائع ابلاغ کےساتھ انٹرویو میں کہاکہ ایران جوہری معاہدے سے دوری اختیار کرکے امریکہ دنیا بھر میں اعتمادیت  کھونے کےساتھ ساتھ خود کو عالمی طاقت کے طورپر پیش کرنے کی صلاحیت بھی کھو سکتا ہے۔

انہوں نے اس سوال کہ ٹرمپ نے انتخابات کے بعد ایرانی جوہری معاہدے کو سبوتاژ کرنے کی دھمکی دی اوروہ اس تاریخی معاہدے کو پھر سے جائزہ لینے کی بات کررہے ہیں کیا وہ اس معاہدے کو مسترد کر دیں گے یا وہ اپنی انتظامیہ میں موجود اسرائیلی لابی کو خوش کرنے کی کوشش کررہے ہیں کے جواب میں کہاکہ  ٹرمپ کے فیصلے کے بارے میں کچھ کہنا قبل از وقت ہوگا اورایسا لگتا ہےکہ  ان کی کابینہ کے تمام مشیر اورمشترکہ سربراہان کا ماننا ہےکہ امریکہ کو ایران جوہری معاہدے کا پابند رہنا چاہئے  لیکن متعدد پابندیوں  اورعلاقائی مسائل کے تحت ایران پر دباؤ قائم رکھنا امریکہ کی پالیسی ہے تاکہ ایران اس معاہدے سے کوئی بھی استفادہ  حاصل نہ کرسکے۔

انہوں نے کہاکہ اگر ہم ایران کی پالیسی پر 12 اکتوبر کو ان کی تقریر پر نظر ڈالیں گےتو ممکن ہےکہ وہ اس معاہدے کو مسترد کردیں گے لیکن وہ کانگریس کو جوہری معاہدے سے متعلق پابندیوں کو عائد کرنے پر مجبور نہیں کریں گے لیکن اس کے بجائے وہ پاسداران انقلاب اسلامی کو دہشتگردی کی لسٹ میں شامل کرنے پر دباؤ ڈالیں گے اوراگر ایسا ہوا تو امریکی قومی سلامتی کے مفادات اورعلاقائی استحکام کیلئے اس کے برُے نتائج سامنے آسکتے ہیں اوریہ اقدام امریکہ اورایران کو خطے میں زیادہ تنازعات کی  اورلے جائیں گے اوریہ دونوں ممالک کے درمیان کسی بھی سفارتکاری کی راہ کو مسدود کردیں گے ۔

موصوف اسکالر نے کہاکہ یورپی یونین ،جرمنی ،فرانس اوربرطانیہ کا ماننا ہےکہ جامع مشترکہ ایکشن پلان کے تئیں ایران پوری طرح کاربند ہے اوریورپیوں کو معلوم ہےکہ ٹرمپ اس معاہدے پر اسلئے ناراض ہے کیونکہ اس معاہدے میں شامل پانچ فریقین امریکہ سے زیادہ فوائد حاصل  کرسکتے ہیں۔

سید حسین موسویان نے مزیدکہاکہ اگر امریکہ ایران جوہری معاہدے سے دستبردار ہوتا ہے تو اسے بین الاقوامی تجارت پر منفی اثرات مرتب ہونگے لہذا ٹرمپ کے ان اقدامات کے خلاف ایران کےساتھ ساتھ پانچ جمع ایک ممالک کے  ارکان کو بھی آواز اُٹھانی چاہئے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر