تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور:13 دسمبر/ نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے بین الاقوامی امور اور قوانین نے تہران میں مغربی ایشیا کی علاقائی سیکورٹی پر منعقدہ قومی سمینار کے موقع پر صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ ملکی دفاعی اور میزائل پروگرام پر مذاکرات کی ہرگز گنجائش نہیں ہے ۔

 نیوزنور:13 دسمبر/ اقوام متحدہ کے ایک رکن کا کہنا ہے کہ اس وقت یمن میں 8 ملین انسان سنگین قحط کا شکار ہیں

نیوزنور:13 دسمبر/عراقی حزب اللہ نے اعلان کیا ہے کہ فلسطینی علاقوں کوصیہونی قبضے سے آزاد کرانے کیلئے وہ غاصب  اسرائیل کےساتھ جنگ کو مکمل طورپر آمادہ ہے۔

نیوز نور:13 دسمبر/ مصر ی دارالفتویٰ نے اپنے ایک بیان میں خبردار کیا ہے  کہ قدس کے نام پر داعش جوانوں کو بھرتی کے لیے گمراہ کرسکتی ہے۔

نیوز نور:13 دسمبر/ فلسطین میں انسانی حقوق کے لئے سرگرم ذرائع کا کہنا ہے کہ پچھلے پانچ دنوں کے دوران حراست میں لئے جانے والے بیت المقدس کے باسیوں میں سے ایک تہائی حصہ کم عمر بچوں کا ہے۔

  فهرست  
   
     
 
    
النشرہ نیوز کی تحلیل :
شامی جنگ کے آخری مرحلے میں امریکہ اس ملک پر اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کیلئے روس کے ساتھ مقابلہ کررہا ہے

نیوزنور: لبنانی نیوز ویب سائٹ النشرہ نے  اپنی ایک تحلیلی رپورٹ میں شام کی موجودہ صورتحال کا جائزہ لیتےہوئےلکھا ہےکہ امریکہ شامی جنگ کے آخری مرحلے میں  روس کےساتھ مقابلہ کررہا ہےتاکہ اس جنگ زدہ ملک پر اپنا ثرو رسوخ کو بڑھا سکے۔

استکباری دنیا صارفین۴۶۱ : // تفصیل

النشرہ نیوز کی تحلیل :

شامی جنگ کے آخری مرحلے میں امریکہ اس ملک پر اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کیلئے روس کے ساتھ مقابلہ کررہا ہے

نیوزنور: لبنانی نیوز ویب سائٹ النشرہ نے  اپنی ایک تحلیلی رپورٹ میں شام کی موجودہ صورتحال کا جائزہ لیتےہوئےلکھا ہےکہ امریکہ شامی جنگ کے آخری مرحلے میں  روس کےساتھ مقابلہ کررہا ہےتاکہ اس جنگ زدہ ملک پر اپنا ثرو رسوخ کو بڑھا سکے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق لبنانی نیوز ویب سائٹ النشرہ نے  اپنی ایک تحلیلی رپورٹ میں شام کی موجودہ صورتحال کا جائزہ لیتےہوئےلکھا کہ امریکہ شامی جنگ کے آخری مرحلے میں  روس کےساتھ مقابلہ کررہا ہےتاکہ اس جنگ زدہ ملک پر اپنا ثرو رسوخ کو بڑھا سکے۔

ویب سائٹ نے لکھاہےکہ امریکہ  شام خاصکر اسکے شمالی اورمشرقی  حصوں میں اپنا اثرورسوخ بڑھا رہا ہے تاکہ اس ملک کے قدرتی وسائل کو لوٹنے کی راہ ہو۔

ویب سائٹ کے مطابق  امریکہ نے نام نہاد سیرین ڈیموکریٹک فورسز کو شمالی اورمشرقی شام میں مزید پیشرفت کیلئے عسکری امداد میں اضافہ کردیا ہے۔

ویب سائٹ نےلکھاہےکہ  امریکیوں کے خیال میں  شام کو محض  روس کے حوالے نہیں کیاجانا چاہئے اورواشنگٹن کو اس جنگ زدہ ملک  کے اقتصادی منصوبوں میں اپنا حصہ وصولنا چاہئے۔

انہوں نے لکھاکہ امریکی فورسز شام کے بہت سے علاقوں میں تعینات ہیں جو الطنف  سرحدی گذرگاہ تک محدود نہیں ہے اوریہ فوجی سیرین ڈیموکریٹک فورسز کو تربیت دیکر زیادہ سےزیادہ شامی علاقوں پر قابض ہونا چاہتے ہیں۔

دریں اثنا روس کی سرکاری نیوز ایجنسی روسیا الیوم کےمطابق اس ملک کے وزیر دفاع نے  ایک بیان میں کہاکہ اردن سے ملحق شامی سرحدوں کے قریب امریکہ کا الطنف فوجی اڈہ داعش دہشتگرد گروہ کے خلاف شامی فوج کی کاروائیوں میں رکاوٹ ہے۔

اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ شامی فوج صوبہ دیرا زور میں داعش کو نابود کرنے کیلئے جتنی پیش قدمی کرتی ہے اتنا ہی اسے الطنف میں موجود امریکی فوجی اڈے کی طرف سے  مسائل  و مشکلات کا سامنا کربا پڑتا ہے۔

انہوں نے کہاکہ الطنف فوجی اڈے کی موجودگی سے پیدا ہونے والی دوسری مشکل اس فوجی اڈے کے نزدیک ہی الرکبان کے علاقے میں واقعہ شامی پناہ گزینوں کے کیمپ کا واقعہ ہوناہے جہاں کم ازکم 60 ہزار  خواتین وبچے پناہ  لئے ہوئے ہیں اورامریکی فورسز الطنف اڈے کو شامی فوج کے حملوں سے بچانے کیلئے ان پناہ گزینوں کو انسانی ڈھال کے طورپر استعمال کررہے ہیں۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر