تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور22فروری/اسلامی تحریک مقاومت حماس کے ترجمان نےکہا ہے کہ سلامتی کونسل کے اجلاس میں نیکی ہیلی کے خطاب سے فلسطینی قوم کے تئیں ان کی دشمنی جھلک رہی تھی۔

نیوزنور22فروری/ایک صیہونی عہدے دار نے کہا ہے کہ امریکہ میں ڈونالڈ ٹرمپ کے صدر بننے کے بعد فلسطین میں اسرائیلی ریاست کے مظالم اور توسیع پسندانہ اقدامات کے ساتھ ساتھ بیرون ملک سے یہودیوں کی آمد میں بھی اضافہ ہوگیا ہے۔

نیوزنور22فروری/اقوام متحدہ میں تعینات روسی مندوب اقوام متحدہ میں ایران مخالف امریکی قرارداد کی کڑی الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اسے جھوٹ کا پلندہ قراردیا ہے ۔

نیوزنور22فروری/تحریک اُمت لبنان کے سیکرٹری جنرل نے کہا ہے کہ عراق کے تمام طبقات کے درمیان وحدت نے اس ملک کی تقسیم کی سازش کو ناکام بنا دیا ہے اور اس وقت جو کچھ بھی عالم اسلام اور عرب دنیا میں ہورہا ہے اسکا اصلی ہدف فلسطین کے مسئلے کو فراموش کروایا جانا ہے۔

نیوزنور22فروری/جماعت اسلامی پاکستان کے مزکزی امیر نے کہا ہے کہ معاشرے میں دین کی دوری کی وجہ سے ماں باپ، اساتذہ اور بڑوں کی عزت نہیں کی جاتی ہے معاشرے میں عدم برداشت کے رویہ کے خاتمے کیلئے علماء کرام، محراب و منبر سے اسلام کی صحیح تعلیمات کو عام کریں کیونکہ اسلام انسانیت کا درس دیتا ہے اور انسانی حرمت کے تقاضے بھی بڑے واضع ہیں اور دین کو صحیح معنوں میں اپنی زندگیوں کا نصب العین بنائے بغیر معاشرتی برائیوں کو کنٹرول نہیں کیا جا سکتا۔

  فهرست  
   
     
 
    
ایران اور ترکی کے روابط بحال ہونا امریکہ اور اسرائیل کے لئے بری خبر ہے

نیوزنور:صہیونی روز نامے نے  ایران اور ترکی کے روابط کی بحالی اور اردوغا ن اور رہبر انقلاب اسلامی ایران کے روابط کی بحالی کی طرف اشارہ کیا ہے۔

استکباری دنیا صارفین۱۱۴۷ : // تفصیل

ایران اور ترکی کے روابط بحال ہونا امریکہ اور اسرائیل کے لئے بری خبر ہے

نیوزنور:صہیونی روز نامے نے  ایران اور ترکی کے روابط کی بحالی اور اردوغا ن اور رہبر انقلاب اسلامی ایران کے روابط کی بحالی کی طرف اشارہ کیا ہے۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنور کی رپورٹ کے مطابق ، صہیونی روزنامے "یروشلم پوسٹ "نے  اپنی ایک رپورٹ میں  ترکی کے صدر رجب  طیب اردوغان کے حالیہ ایران کے دورے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے لکھا ہے: آنکارا اور تہران ایک مدت سے اپنے روابط بہتر بنانے کی کوشش میں ہیں اور  روس کے صدر اورسعودی  عرب   کی ملاقات کے درمیان ان دوملکوں کی جدید نشست  منعقد ہوئی ہے۔

اس بنا پر جمہوری اسلامیء  ایران کے صدر حسن روحانی نے اردوغان کے ساتھ ملاقات میں اس پر تاکید کی ہے کہ   مشرق وسطی کے حالات میں بے ثباتی  چند دشمنوں کی طرف سے اقوام کو بانٹنے اور ان میں اختلافات پیدا کرنے کا نتیجہ ہے۔

ترکی اور ایران نے حالیہ نشست میں  اپنی سالانہ تجارت کی سطح 30 میلین ڈالر تک بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے  کہ جس میں  ترکی کو قدرتی گیس  دینے کی بات ہوئی ہے۔

اس روز نامے نے آگے لکھا ہے: ایران اور ترکی کے حالات میں بہتری کوئی نئی بات نہیں ہے اکتوبر سال 2009 میں بھی  اردوغان نے روزنامہ گارڈین سے کہا تھا کہ ایران ہمارا دوست ہے۔

اس وقت محمود احمدی نژاد ایران کے صدر  تھے اوراردوغان ترکی کے وزیر اعظم تھے ۔ لیکن اس وقت بھی اردوغان نے کہا تھا کہ رببر ایران کے ساتھ ہمارے تعلقات بہت اچھے ہیں ۔

 جرزوالم پوسٹ نے لکھا ہے: سال 2016 کے بحران کے بعد تہران اور آنکارا کے روابط میں بہتری آئی ہے جون کے مہینے میں ترکی  نے سعودی عرب ، متحدہ عرب  امارات ، بحرین ، مصر اور قطر کے ساتھ اپنے روابط قطع ہونے کے بعد  اپنی فوج کو ایران بھیجا تھا۔

اس روزنامے نے اردوغان کے ایران دورے اور ملک سلمان کے روس کے دورے کے بارے میں لکھا ہے کہ : ایران ، سعودی عرب اور ترکی کی میٹینگوں  کے بارے میں سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ  علاقے کی  حکومتیں یہ دیکھ رہی ہیں کہ عراق اور شام کی جنگ رو بہ اتمام ہے  اور وہ علاقے میں اپنی نئی ساکھ بنانے کے ساتھ ساتھ ڈیپلومیٹک نظام قائم کرنے کی کوشش میں ہیں ۔

ممکن ہے کہ یہ بات اسرائیل کے لئے ناگوار ہو کیونکہ ایران طاقتور ہو چکا ہے  اور  کردستان کے ریفرنڈم میں  موساد کی مداخلت اور ایران کا کردستان کو اسرائیل دوم کہنا ان مخالفتوں میں اضافے کا سبب بنا ہے۔

اس تحلیل کے آخر میں آیا ہے : سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آیا یہ ممکن ہے کہ  سعودی عرب اور روس  تہران اور آنکارا کے روابط کو متعادل کر سکتے ہیں ۔ 

 


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر