تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور 19جنوری/ہیومن رائٹس واچ کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر نے انسانی حقوق کے حوالے سے امریکی صدر کے کرادار کو تباہ کن قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ ایک ڈکٹیٹر ہیں اور سعودی عرب جیسی غیر جمہوری حکومت کی حمایت کرتے ہیں۔

نیوز نور 19جنوری/لبنانی مسلح افواج کے سربراہ نے کہا ہے کہ ہم اسرائیلی حملوں کا جواب دینے کے لیے تیار ہیں۔

نیوز نور 19جنوری/اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل نے کہا ہے کہ ایران کے جوہری معاہدے کو خطرے میں ڈالنے سے عالمی امن کے لئے مشکل پیدا ہوگی۔

نیوزنور19جنوری/ایک عرب روز نامے نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ سعودی عرب یمن پر مسلط کردہ جنگ کے دلدل میں بری طرح گرفتار ہوگيا ہے اور سعودی عرب کے لئے یمن پر مسلط کردہ جنگ سے نکلنے کا واحد راستہ انصار اللہ سے مذاکرات ہیں۔

نیوزنور19جنوری/اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران میں نماز جمعہ کے خطیب نے مسئلہ فلسطین اور یمن کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیائے اسلام کو فلسطین اور یمن کے مظلوم عوام کی حمایت کے بارے میں اپنی شجاعت کا مظاہرہ کرنا چاہیے اور حق بات کہنے سے گھبرانا نہیں چاہیے۔

  فهرست  
   
     
 
    
ایران میں جنوری 2018 کا فتنہ 2009 کا بوسیدہ نسخہ

نیوزنور:ایران میں جنوری 2018 کے فتنے پر گہری نظر ڈالتے ہوئے  اس  میں 2009کے فتنوں کی جھلک اور  خارجی لابی کا ہاتھ نظر آتا ہے۔البتہ جب تک  ملت ایران بصیرت اور ایمان سے لیس ہے  اور سایہ ولایت میں ہے تب تک یہ ہر طوفان کو عبور کرنے کا حوصلہ رکھتی ہے  اور دشمنوں کی سازشیں ملت ایران کے ایمان اور قوت میں اضافے کا سبب بنیں گی۔

اسلامی بیداری صارفین۲۵۱۲ : // تفصیل

ایران میں جنوری 2018 کا فتنہ 2009 کا بوسیدہ نسخہ

نیوزنور:ایران میں جنوری 2018 کے فتنے پر گہری نظر ڈالتے ہوئے  اس  میں 2009کے فتنوں کی جھلک اور  خارجی لابی کا ہاتھ نظر آتا ہے۔البتہ جب تک  ملت ایران بصیرت اور ایمان سے لیس ہے  اور سایہ ولایت میں ہے تب تک یہ ہر طوفان کو عبور کرنے کا حوصلہ رکھتی ہے  اور دشمنوں کی سازشیں ملت ایران کے ایمان اور قوت میں اضافے کا سبب بنیں گی۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنور کی رپورٹ کے مطابق   جمعرات 28دسمبر2017 کو  سوشل میڈیا پر پہلی بار مشہد کے احتجاجات کی تصویریں شائع ہوئیں  کہ جو بہت ہی جلدی بین الاقوامی میڈیا کی توجہ کا مرکز بن گئیں ۔ اور ان کے نعرے سے معلوم ہوتا تھا  کہ یہ وہ لوگ ہیں جو ملک کی بگڑتی معاشی حالت پر نالاں ہیں ۔  یہ اعتراضات  چند اقتصادی مشکلات ، رہبر انقلاب حضرت امام خامنہ ای  کے بیانات اور اسی طرح  چند حکمرانوں کے وعدوں کو نہ پورا کرنے کی وجہ سے وجود میں آئے تھے۔  لیکن حالات ایک دم سے تبدیل ہوگئے  اور وہ نعرے  کہ جن سے اقتصادی بد حالی کی بو آ رہی تھی   وہ ضد انقلابی گروہ کے سو استفادہ کا موجب بنے  اور احتجاجات   نے ملک کی حکومت  کی مخالفت کی صورت اختیار کر لی۔

 مزید  امریکی اور مغربی حکام کا ان مظاہروں کا استقبال  ،  ایران میں ان مظاہروں کے ساتھ اسرائیل ، امریکہ ، برطانیہ اور سعودی عرب کی حمایت کا موجب بنا اور بہت ہی جلد یہ خبریں سوشل میڈیا پر شائع ہونے لگیں ۔ اپنے برنامے سے ہٹ کر    فوق العادہ طور پر  فارسی،عربی ، انگریزی سیٹلائیٹ نیٹورک نے  ان مظاہروں  کو  تعلیم یافتہ عوام کا حکومت کے خلاف احتجاج بتایا ،  مغربی رہنماوں  جیسا کہ امریکی صدر کہ جس نے13اکتوبر2017 کچھ عرصہ قبل  پوری ایران کو ایک دہشت قوم[Iran a terrorist nation]  بتایا تھا  نے حقوق بشر کے نام پر  ایران کے  ملک میں جاری مظاہروں کا دفاع کیا۔

سعودی ولی عہد: ہم جنگ کو ایران میں داخل کر دیں گے۔

سعودیہ کے سوشل میڈیا سرگرم ارکان ان دنوں  سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کی ایک ویڈیو بعنوان  ہم جنگ کو ایران میں داخل کر دیں گے  ، کو سوشل میڈیا پر منتشر کر رہے ہیں کہ وہ ویڈیو سعودی ولی عہد کی  اسپوتنیک نیوز ایجنسی کو دئے گئے ایک انٹرویو کا حصہ ہے۔  اس ویڈیو میں محمد بن سلمان ایران اور سعودی عرب کے اختلافات کے بارے میں کہتے ہیں : ہمارا ایران کے ساتھ کوئی  نظریاتی اتفاق نہیں ہے۔  ایران کا اصلی ھدف مسلمانوں کے قبلے کو ہتھیانا ہے اور ہم ہر گز اس بات کا انتظار نہیں کریں گے کہ سعودی عرب جنگ سے دو چار ہو ، بلکہ ہم کوشش کریں گے کہ یہ جنگ ایران میں داخل ہو جائے۔


خوزستان صوبہ کے ایذہ شہر اور صوبہ لرستان کےدوروشہر فتنہ گروں کی توجہ کے مراکز   شہر

خوزستان صوبہ کےایذہ شہر اور صوبہ لرستان کے  دورود شہر   سمیت ایران بھر کے دوسرے حصوں میں فتنہ گروں کی جانب سے فتنہ پھیلانے کی کوشش کرنا  باعث تعجب ہے ، ان دو شہروں کے عہدے داران کی اطلاعات کے  گرفتار کئے جانے والے فتنہ گر عوامل  نے  اپنے  خارجی روابط کا اقرار کر لیا ہے  اور حتی چند نا معلوم  گروہ ایک مدت سے  ان دو شہروں میں اس طرح کے حالات پیدا کرنے کی کوشش میں تھے  لیکن ایک بار پھر سے  دشمنان انقلاب کو کراری شکست کا سامنا ہوا ہے  اور اپنے سیاہ کارناموں میں انہیں شکست سے دو چار ہونا پڑا ہے۔

حالیہ مظاہرے 2009  کے مظاہرے  اور اعتراضات سے مشابہ ہیں۔

   لوگوں کے اعتراضات سے سوء استفادہ  اور اسے  نظام کے خلاف تبدیل کرنے کی سازش نے بہت جلدی ہمیں  فتنہ گروں کی سازش کی طرف متوجہ کر دیا ، وہ نہ صرف یہ کہ ملک کی سلامتی کے خواہاں نہیں ہیں بلکہ قومی پرچم کو نذر آتش کر کے انہوں نے اپنے اصلی عزائم  ظاہر کر دئے ہیں۔

فتنہ گر عناصر نے  سڑکوں کو بند کر کے ، عوامی مراکز پر حملہ کر کے ، اور دکانوں اور سامان کو آگ لگا کے2009 کے فتنہ گروں کے ساتھ اپنا  تعلق ظاہر کیا ہے،   حکومت پر لوگوں سے نمٹنے کے لئے سختی کرنے کا الزام لگاتے ہوئے قتل کی کوششیں کرنا ،  بسوں  اور بی آر ٹی اسٹیشنوں کو آگ لگانا  اور حکومتی گاڑیوں کو آگ لگانا ،  آگ بجھانے والے عملے اور سیکیورٹی فورسز کے ساتھ ہاتھا پائی کرنا  اس بات کی نشاندھی کرتا ہے کہ  آج کے فتنہ گروں اور گذشتہ فتنہ گروں میں کوئی فرق نہیں ، اور یہ وہی ماضی والا فتنہ ہے۔

 ایک داخلی اقتصادی تحلیلی ٹویٹر اکاونٹ پوسٹ نشر کرتے ہوئے لکھتا ہے:  سکے ، سونے اور سٹاک مارکٹ پر حالیہ خرابی کے اثرات / کیا یہ حالیہ خرابیاں لوگوں کی معیشت کے لئے فائیدہ  ہیں ؟

سوشل میڈیا ،  دو دھاری تلوار۔

اسی حال میں  ، داخلی سوشل میڈیا گروپس ، کہ جنہوں نے بہت تیزی کے ساتھ  فتنہ گروں کے چہروں کو عیاں کرتے ہوئے لوگوں کو  بیدار کیا ہے  قابل تشکر ہیں ،  لیکن اس دوران  خارجی عوامل کی جانب سے سوء استفادہ کرتے ہوئے پھیلائی گئی جھوٹی خبریں  عوام اور سیکیورٹی فورسز کے لئے ایک سبق ہیں۔

 صہیونی چینل آمد نیوز کہ جس کی تازہ ثبت شدہ ڈومین کے عنوان سے تشخیص ہوئی ہے  اور جو سعودی عرب کی جانب سے ثبت کیا گیا ہے  اور اسے خفیہ ایجنسی موساد کی پشت پناہی حاصل تھی  اس حد تک بڑھ گیا کہ ٹیلیگرام کے مدیر کو  اپنا رد عمل ظاہر کرنا پڑا۔

پاول دوروف نے اس بارے میں ٹویٹر پر لکھا ہے:  ایک ٹیلیگرام چینل آمد نیوز  اپنے اعضا کو  پولیس کے خلاف، غیر قانونی  کوکتل(دستی بمب)  سے استفادہ کرنے کی وصیت کرنے کی بنا پر مسدود ہو چکا ہے۔ ہوشیار رہیں ،  یہ وہ حدود ہیں کہ جنہیں عبور نہیں کیا جانا چاہئے۔


 لیکن جیسا کہ مقام معظم رہبری حضرت امام خامنہ ای نے شھدا کے خانوادے کے ساتھ ملاقات میں کہا تھا: دشمن ایران میں داخل ہونے اور ایرانی ملت کو نقصان پہنچانے کی تاک میں ہے، اور حالیہ دنوں میں ایرانی دشمنوں نے اسلامی نظام کے لئے ایک مسئلہ پیدا کرنے کے لئے پیسہ، ہتھیار، سیاست اور سیکورٹی سمیت مختلف وسائل کے ساتھ اتحاد کیا ہے. لیکن  اس ملت کا ایمان اور ان کی شجاعت دشمن کی راہ میں رکاوٹ ہے۔


بعثی افواج کی جانب سے حملے کے مقابلے میں دفاع مقدس 2009 کے فتنے کا مقابلہ  اور حالیہ فتنوں کا مقابلہ اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ جب تک  ملت ایران بصیرت اور ایمان سے لیس ہے  اور سایہ ولایت میں ہے تب تک یہ ہر طوفان کو عبور کرنے کا حوصلہ رکھتی ہے  اور دشمنوں کی سازشیں ملت ایران کے ایمان اور قوت میں اضافے کا سبب بنیں گی۔

 ۔۔۔۔۔۔۔۔

دیکر مربوط مطالب:


ایران میں سال2009 کے فتنے میں امریکہ نے ۱۷ ارب ڈالر خرچ کیے تھے2018 فتنے کا بجٹ کا اندازہ لگانا مشکل نہیں


ایران کے انقلابی عوام نے مائیکل انڈریا کے منصوبےکو ناکام بناکر امریکہ کو اسکی اوقات بتائی


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر