تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور20فروری/اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی برائے فلسطین نے فلسطینی علاقوں میں صہیونی ریاست کے اقدامات کو بین الاقوامی قوانین کی صریح خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے  کہا ہے کہ فلسطینی علاقوں پر اسرائیلی قبضہ غاصبانہ ہے۔

نیوزنور20فروری/اقوام متحدہ تعئنات اٹلی کے مندوب نے ایران جوہری معاہدے کے تحفظ پر زور دیتے ہوئے اسے عالم امن و سلامتی کے لئے مضبوط پلر قرار دیا ہے۔

نیوزنور20فروری/روس کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ شام میں اسلامی جمہوریہ ایران کی موجودگی قانون اور شامی حکومت کی باضابطہ درخواست کے مطابق ہے۔

نیوزنور20فروری/فلسطینی عسکری تنظیم اسلامی جہاد کے مرکزی رہنمانے امریکہ کی مشرق وسطیٰ کے حوالے سے سازشوں کو کڑی تنقید کا نشانہ بنا تے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ فلسطین سمیت پورے خطے کو ٹکڑوں میں تقسیم کرنا چاہتا ہے۔

نیوزنور20فروری/ایک فلسطینی تجزیہ نگار نےکہا ہے کہ حال ہی میں مسجد اقصیٰ پر دھاوا بولنے والے یہودی آباد کاروں نے ایک نہتے فلسطینی نوجوان پرمصطفیٰ المغربی کو قاتلانہ حملہ کرکے اسے شدید زخمی کردیا۔

  فهرست  
   
     
 
    
روزنامہ دی ہل کے کالم نگار:
امریکہ افغان مسئلے کو فوجی آوپشن کے بجائے سفارتی طریقے سے حل کرنے کی کوشش کرے

نیوزنور09 فروری/مشہور امریکی روزنامہ  دی ہل کے کالم نگار نے  کہا ہے کہ  امریکہ کو افغانستان میں  اپنی توجہ  مستقل فوجی قیام کے بجائے اس ملک میں انسداد دہشتگردی مہم پر مرکوز کرنی چاہئے۔

استکباری دنیا صارفین۲۱۹ : // تفصیل

روزنامہ دی ہل کے کالم نگار:

امریکہ افغان مسئلے کو فوجی آوپشن کے بجائے سفارتی طریقے سے حل کرنے کی کوشش کرے

نیوزنور09 فروری/مشہور امریکی روزنامہ  دی ہل کے کالم نگار نے  کہا ہے کہ  امریکہ کو افغانستان میں  اپنی توجہ  مستقل فوجی قیام کے بجائے اس ملک میں انسداد دہشتگردی مہم پر مرکوز کرنی چاہئے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے’’نیوز نور‘‘ کی رپورٹ کے مطابق    ایک انٹرویو میں ’’برنٹ بوڈو سکائی‘‘نے کہا کہ امریکہ کو افغانستان میں  اپنی توجہ  مستقل فوجی قیام کے بجائے اس ملک میں انسداد دہشتگردی مہم پر مرکوز کرنی چاہئے۔

انہوں نے کہاکہ امریکہ کو ا فغانستان میں  استحکام کیلئے سفارتی کوششوں کی حمایت کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے تاکید کی کہ  اس جنگ زدہ ملک میں جاری 17 سالہ بحران کا کوئی اب فوجی حل نہیں ہے ۔

انہوں نے کہاکہ امریکہ کے پاس افغان مسئلے کو حل کرنے کا واحد راستہ یہی ہے کہ وہ اس ملک میں تمام جماعتوں کےساتھ  مذاکراتی میز پر آنے کی کوشش کرے۔

انہوں نے کہاکہ جب تک  امریکہ  اس کے اتحادی کابل حکومت اوران کے مخالفین کے ساتھ  کسی معاہدے تک نہیں پہنچتے تب تک اس جنگ زدہ ملک میں خون ریزی کو بند نہیں کیا جاسکتا ۔

انہوں نے کہاکہ 2003 ء میں عراق پر امریکہ لشکر کشی ایک  اسٹریٹجک غلطی  ہوئی اور امریکہ اوراسکے اتحادی عراق اورافغانستان میں دہائیوں سے برُی طرح پھنسے رہے ہیں۔

موصوف تجزیہ نگار نے کہاکہ  امریکہ کو 2001 ء 2002 ء میں افغانستان میں اپنا مشن مکمل کرکے  اپنی فوجیں واپس بلانے چاہے تھی ۔

انہوں نے کہاکہ افغانستان کے مسئلے کے حوالے سے کابل حکومت اورطالبان کے درمیان ایسا سیاسی معاہدہ ہونا چاہئے  کہ جس میں ملک میں امریکہ کا کردار محدود ہو تاکہ اس ملک میں  دہشتگردی تشددوبدامنی کو ہمیشہ کیلئے ختم کیا جاسکے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر