تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوزنور20فروری/اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی برائے فلسطین نے فلسطینی علاقوں میں صہیونی ریاست کے اقدامات کو بین الاقوامی قوانین کی صریح خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے  کہا ہے کہ فلسطینی علاقوں پر اسرائیلی قبضہ غاصبانہ ہے۔

نیوزنور20فروری/اقوام متحدہ تعئنات اٹلی کے مندوب نے ایران جوہری معاہدے کے تحفظ پر زور دیتے ہوئے اسے عالم امن و سلامتی کے لئے مضبوط پلر قرار دیا ہے۔

نیوزنور20فروری/روس کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ شام میں اسلامی جمہوریہ ایران کی موجودگی قانون اور شامی حکومت کی باضابطہ درخواست کے مطابق ہے۔

نیوزنور20فروری/فلسطینی عسکری تنظیم اسلامی جہاد کے مرکزی رہنمانے امریکہ کی مشرق وسطیٰ کے حوالے سے سازشوں کو کڑی تنقید کا نشانہ بنا تے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ فلسطین سمیت پورے خطے کو ٹکڑوں میں تقسیم کرنا چاہتا ہے۔

نیوزنور20فروری/ایک فلسطینی تجزیہ نگار نےکہا ہے کہ حال ہی میں مسجد اقصیٰ پر دھاوا بولنے والے یہودی آباد کاروں نے ایک نہتے فلسطینی نوجوان پرمصطفیٰ المغربی کو قاتلانہ حملہ کرکے اسے شدید زخمی کردیا۔

  فهرست  
   
     
 
    
عبدالباری عطوان:
مشرقی عرفات کےکنارے پر آزاد کرد ریاست کا قیام امریکہ کی شام مخالف منصوبہ بندی ہے

نیوز نور12 فروری /عرب دنیا کے ایک کہنہ مشق تجزیہ کار اورروزنامہ رائے الیوم کے مدیراعلیٰ نے خبردار کیا ہے کہ امریکہ شام کو تقسیم  اورشمالی شام میں کردوں کی مدد سے مستقل فوجی اڈے  قائم کرنے کا منصوبہ رکھتا ہے۔

استکباری دنیا صارفین۲۵۷ : // تفصیل

عبدالباری اتوان:

مشرقی عرفات کےکنارے پر آزاد کرد ریاست کا قیام امریکہ کی شام مخالف منصوبہ بندی ہے

نیوز نور12 فروری /عرب دنیا کے ایک کہنہ مشق تجزیہ کار اورروزنامہ رائے الیوم کے مدیراعلیٰ نے خبردار کیا ہے کہ امریکہ شام کو تقسیم  اورشمالی شام میں کردوں کی مدد سے مستقل فوجی اڈے  قائم کرنے کا منصوبہ رکھتا ہے۔

عالمی اردوخبر رساں ادارے‘‘نیوزنور’’کی رپورٹ کے مطابق ایک مختصر مضمون میں  ’’عبدالباری اتوان‘‘نے کہاکہ امریکہ شام کو تقسیم  اورشمالی شام میں کردوں کی مدد سے مستقل فوجی اڈے  قائم کرنے کا منصوبہ رکھتا ہے۔

انہوں نے  امریکہ کی قیادت والے  داعش مخالف نام نہاد  اتحاد کے جنگی طیاروں کے  دیرا زور پر حالیہ حملے کہ جس میں سو سے زائد شامی فوج اوران کے اتحادی فورسز ہلاک ہونے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ شامی وزارت خارجہ پر  یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ ان حملوں کو جنگی جرائم قراردیں کیونکہ امریکی فورسز شام اورعراق میں  دہشتگردی کے خلاف جنگ کےبہانے داخل ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ اب جبکہ دونوں عرب ممالک  شام وعراق میں دہشتگردوں کا وجود تقریباً ختم ہوچکا ہے  اس لئے اب ہمیں امریکہ سے سوال کرنا چاہئے کہ کیوں اس کی فوجیں ابھی بھی دونوں ممالک میں موجود ہیں۔

انہوں نے کہاکہ  شامی فوج اوران کے اتحادیوں پر حالیہ حملوں کا مقصد اس عرب ملک کی تقسیم اور کردوں کے ذریعے اپنے فوجی بیسز قائم کرنے کی راہ ہموار کرنا ہے۔

ایک امریکی عہدیدار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر میڈیا کو بتایا کہ  امریکی اتحاد کی جنگی طیاروں نے  دیرا زور میں کرد ملیشیا کے ٹھکانوں پر شامی حکومت کی طرفدار فورسز کے حملوں کے بعد  ان فورسز کے ٹھکانوں پر بمباری کی ۔

امریکہ نے  اپنے  مغربی وعلاقائی اتحادیوں کےساتھ مل کر اگست 2014 ء میں اقوام متحدہ کی اجازت کے بغیر اورشامی حکومت کی مرضی کے برخلاف شام کے اندر داعش کامقابلہ کرنے کےبہانے  ایک نام نہاد اتحاد تشکیل دیا تھا اس اتحاد کے حملوں میں  اب تک ہزاروں عام شامی  ہلاک جبکہ لاکھوں زخمی ہوئے ہیں جبکہ  تاریخی  شہروں کے بنیادی ڈھانچے کو زمین بوس کردیاگیا ہے۔

عبدالباری اتوان نےمزید  کہاکہ امریکہ کے اسطرح کے اقدامات سے لگتا ہےکہ امریکہ  شمالی شام میں ایک  آزاد کردریاست کے قیام کا ارادہ رکھتا ہے۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر