تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور 23 اپریل/ بحرین کے ایک ممتاز شیعہ عالم دین نے اس بات کےساتھ کہ آل خلیفہ  رژیم کےسامنے فلسطینی کاز کی کوئی اہمیت نہیں ہے کہا ہے کہ بحرینی عوام  اپنے تمام جائز مطالبات پورے ہونے تک اپنی تحریک جاری رکھیں گے۔

نیوزنور23اپریل/روسی وزارت خارجہ کی ترجمان نے کہا ہے کہ مغربی ممالک شام کے شہر دوما میں کیمیائی حملے سے متعلق حقائق میں تحریف کر رہے ہیں۔

نیوزنور23اپریل/ٹوئٹر پرسعودی عرب کے  سرگرم  اور شاہی خاندان کے قریبی کارکن نےسعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں شاہی محل میں کل رات ہونے والی فائرنگ کی اصل حقیقت سامنے لاتے ہوئے کہا ہے کہ فائرنگ کے واقعہ میں آل سعود کے بعض اعلٰی شہزادے ملوث ہیں ڈرون کو گرانے کا واقعہ سعودی حکومت کا ڈرامہ ہے فائرنگ کے واقعہ کے بعد سعودی بادشاہ اور ولیعہد شاہی محل سے فرار ہوگئے تھے۔

نیوزنور23اپریل/اسلامی مقاومتی محورحزب اللہ لبنان کے سربراہ نے کہا ہےکہ اسرائيل کو لبنانیوں کے خلاف جارحیت سے روکنا ہمارا سب سے بڑا ہدف ہے ۔

نیوزنور23اپریل/مجلس وحدت مسلمین پاکستان سندھ کے سیکرٹری جنرل نے کہا  ہے کہ امام حسینؑ نے ۱۴ سو سال قبل ان دہشتگردوں کو شکست دی جو دین اسلام کا لبادہ اوڑھ کر دین کو اپنی پسند نا پسند میں ڈھال رہے تھے۔

  فهرست  
   
     
 
    
کیا"واپسی مارچ"صہیونی حکومت کا مقابلہ کرنے کی ایک نئی حکمت عملی ہے؟

نیوزنور:جمعے کے روز ہزاروں اہلیان غزہ کی موجودگی میں شروع ہونے والا عظیم واپسی مارچ کہ جس میں اب تک 16 افراد شہید اور سینکڑوں دیگر زخمی ہو چکے ہیں ،   عظیم مقاصد اور آشکارا  پیغامات کا حامل ہے۔

اسلامی بیداری صارفین۳۴۲۹ : // تفصیل

کیا"واپسی مارچ"صہیونی حکومت کا مقابلہ کرنے کی ایک نئی حکمت عملی ہے؟

نیوزنور:جمعے کے روز ہزاروں اہلیان غزہ کی موجودگی میں شروع ہونے والا عظیم واپسی مارچ کہ جس میں اب تک 16 افراد شہید اور سینکڑوں دیگر زخمی ہو چکے ہیں ،   عظیم مقاصد اور آشکارا  پیغامات کا حامل ہے۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنور کی رپورٹ کے مطابق  فلسطینی جرنلسٹ اور کالم نگار "عوض ابودقہ" نے غزہ کے گرد و نواح میں ہزاروں فلسطینیوں کی جانب سے شروع ہونے والے "واپسی مارچ "کی تحلیل کرتے ہوئے لکھا کہ اس مارچ کا پہلا پیغام یہ تھا کہ ہماری ملت زندہ ہے اور اسی طرح زندہ رہے گی  اور صہیونی حکومت کے  خلاف جاری فلسطینی عوامی جدو جہد کا رخ بدلنے کے لئے کی جانے والی سازشیں کسی نتیجے تک نہیں پہنچیں گی۔

اس جلوس کے دیگر پیغامات میں سے ایک یہ ہے کہ ملت فلسطین صہیونی حکومت  کا مقابلہ کرنے کے لئے نئے اور کلاسیک طریقے اختیار کرنے پر قادر ہے  اور انہوں نے عوامی فکر کو  اپنے رنج و غم اور صہیونی جنایت کاروں کی طرف مبذول کیا ہے۔

ابو دقہ کی تحریر کے مطابق اس عظیم تحریک کے پیغامات میں سے ایک یہ بھی تھا   کہ فلسطین کی نوجوان نسل ہر گز دشمن کی جانب سے اپنے اجداد کی بے وطنی ،کہ 1948 میں جنہوں نے اس کا  تلخ ذائقہ چکھ لیا تھا  ، کو ہر گز فراموش نہیں ہونے دیں گے ، اور ہم  دیکھ رہے ہیں کہ انہی اجداد کی نسل جدید نے  اسرائیلی فوج کی پرواہ کئے بغیر   "واپسی کا مارچ" شروع کیا ہے  اور صہیونی فوج کو یہ واضح پیغام دیا ہے   گذشتہ ایک دہائی کے زخم ہر گز اس بات کی وجہ نہیں بن سکتے  کہ ہم اپنے بنیادی حق اور اپنی سرزمین کو فراموش کر دیں ۔

اس عظیم مارچ کے پیغامات میں سے ایک پیغام یہ بھی تھا کہ   فلسطینی عوام جس نقطے پر جمع ہوئی ہے وہ ان کے اصول ان کے حقوق اور ان کا اتحاد ہے  اور اس مارچ میں شامل تمام افراد  ہر طرح کی مسلح مقاومت سے ہٹ کر ، فلسطینی پرچم کو اپنے ہاتھوں میں اٹھائے ہوئے  اتحاد کے فلک شگاف نعرے بلند کر رہے ہیں ۔

اس مارچ کا ایک پیغام امریکی صدر  ڈونلڈ ٹرمپ کے نام اس بات پر مبنی تھا  کہ اس کی جانب سے  "صدی کے معاہدے "، اور" قدس کو صہیونی پایتخت" بنانے والے اقدامات کا جواب ضرور دیا  جائے گا اور انہیں فلسطینی عوام کی جانب سے محکم جوابات کا سامنا کرنا پڑے گا۔

 اسی طرح یہ عظیم عوامی مارچ  ایک جدید فلسطینی مقاومت کے طور پر ابھر کر سامنے آیا ہے کہ جس میں تمام احزاب ، گروہ اور سیاسی جماعتیں ایک پرچم تلے صہیونی حکومت کا مقابلہ کرنے کے لئے جمع ہوئی ہیں  کہ اس صورت میں ان کا موقف  متحد ہوگا اور یہ چیز فلسطینی مسئلے پر اثر انداز ثابت ہوگی۔ 

ملت فلسطین نے اس مارچ سے ثابت کر دیا ہے کہ وہ قوت ایمانی اور فولادی جذبوں کے ساتھ اس بات پر قادر ہیں کہ اپنا حق لے سکیں  اور اسلامی و عربی ممالک کی مجرمانہ خاموشیاں اور منافقتیں کہ جو شاید ان کے داخلی مسائل کے پیش نظر ہوں بلا شک صہیونی فوج کے مقابلے میں فلسطینی مقاومت پر اثر انداز ہوں گی لیکن اس حد تک اثر انداز نہیں ہو سکتیں  کہ جو فلسطینیوں کو ان کا حق لینے سے روک سکے۔ 

ابو دقہ نے فلسطینیوں کی جانب سے غزہ اور متنازعہ علاقوں کے درمیان  1948  میں بنائی جانے والی سرحدوں اور دیواروں کو کامیابی کے ساتھ عبور کرنے کے متعلق لکھا  کہ فلسطینی ایک بار پھر اس بات  میں کامیاب ہوئے ہیں کہ اسرائیلی کاروائیوں کا منہ توڑ جواب دے سکیں  اور ہر لمحہ ایک نئی جنگ کا احتمال پایا جاتا ہے  اور اسی بارے میں صہیونی روزنامے "معاریو" نے  اپنے جمعہ کے شمارے میں  مقبوضہ غزہ کے گرد و نواح کے علاقوں کے حالات کو کوکر پریشر سے تعبیر کرتے ہوئے لکھا کہ وہاں بخار جمع ہو رہا ہے اور وہ پھٹنے کی زد پہ ہے اور اس تحریک آزادی کے رہبران کہ جواس کوکر پریشر کی سیٹی ہیں ٹھیک سے کام نہیں کر رہے ہیں ۔

ابو دقہ نے آخر میں لکھا  کہ یہ عظیم عوامی تحریک  اس مارچ کی طرف سیاست اور میڈیا کی توجہ مبذول کرنے میں کامیاب ہوئی ہے اور اس کی وجہ سے متجاوز اور ظالم صہیونی حکومت کا چہرہ کھل کر سامنے آیا ہے۔            


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر