تازہ ترین خبریں  
 
 
  تازہ ترین مقالات  
 
 
  مقالات  
 
 
  پیوندها  
   

نیوز نور 23 اپریل/ بحرین کے ایک ممتاز شیعہ عالم دین نے اس بات کےساتھ کہ آل خلیفہ  رژیم کےسامنے فلسطینی کاز کی کوئی اہمیت نہیں ہے کہا ہے کہ بحرینی عوام  اپنے تمام جائز مطالبات پورے ہونے تک اپنی تحریک جاری رکھیں گے۔

نیوزنور23اپریل/روسی وزارت خارجہ کی ترجمان نے کہا ہے کہ مغربی ممالک شام کے شہر دوما میں کیمیائی حملے سے متعلق حقائق میں تحریف کر رہے ہیں۔

نیوزنور23اپریل/ٹوئٹر پرسعودی عرب کے  سرگرم  اور شاہی خاندان کے قریبی کارکن نےسعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں شاہی محل میں کل رات ہونے والی فائرنگ کی اصل حقیقت سامنے لاتے ہوئے کہا ہے کہ فائرنگ کے واقعہ میں آل سعود کے بعض اعلٰی شہزادے ملوث ہیں ڈرون کو گرانے کا واقعہ سعودی حکومت کا ڈرامہ ہے فائرنگ کے واقعہ کے بعد سعودی بادشاہ اور ولیعہد شاہی محل سے فرار ہوگئے تھے۔

نیوزنور23اپریل/اسلامی مقاومتی محورحزب اللہ لبنان کے سربراہ نے کہا ہےکہ اسرائيل کو لبنانیوں کے خلاف جارحیت سے روکنا ہمارا سب سے بڑا ہدف ہے ۔

نیوزنور23اپریل/مجلس وحدت مسلمین پاکستان سندھ کے سیکرٹری جنرل نے کہا  ہے کہ امام حسینؑ نے ۱۴ سو سال قبل ان دہشتگردوں کو شکست دی جو دین اسلام کا لبادہ اوڑھ کر دین کو اپنی پسند نا پسند میں ڈھال رہے تھے۔

  فهرست  
   
     
 
    
امریکی تجزیہ کار:
جان بولٹن صدر ٹرمپ کا ایسا بے حس مہرہ ہے جو اقوام عالم کو تیسری عالمگیر جنگ کی دہلیز پر کھڑا کر سکتا ہے

نیوزنور11اپریل/امریکہ کے ایک سیاسی مبصر نےامریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے جان بولٹن کو مشیر قومی سلامتی مقرر کرنے کے فیصلے کی کڑی الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے جان بولٹن کو ٹرمپ کا بے حس مشیر قرار دیا ہے۔

استکباری دنیا صارفین۶۷ : // تفصیل

امریکی تجزیہ کار:

جان بولٹن صدر ٹرمپ کا ایسا بے حس مہرہ ہے جو اقوام عالم کو تیسری عالمگیر جنگ کی دہلیز پر کھڑا کر سکتا ہے

نیوزنور11اپریل/امریکہ کے ایک سیاسی مبصر نےامریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے جان بولٹن کو مشیر قومی سلامتی مقرر کرنے کے فیصلے کی کڑی الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے جان بولٹن کو ٹرمپ کا بے حس مشیر قرار دیا ہے۔

عالمی اردو خبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق فاکس نیوز کے سابق تجزیہ نگار’’ کارل ڈبلیو فورڈ جونیئر ‘‘امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے جان بولٹن کو مشیر قومی سلامتی مقرر کرنے کے فیصلے کی کڑی الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے جان بولٹن کو ٹرمپ کا بے حس مشیر قرار دیا ہے۔

انہوں نے جان بولٹن کو ایک  مغرور شخص قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان کی موجودگی سے ٹرمپ انتظامیہ اور وائٹ ہاوس کی خارجہ پالیسی میں  عسکریت پسندی کا رحجان زور پکڑ سکتا ہےکیونکہ 1970 کی دہائی میں جان بولٹن نے امریکی صدر جارج ڈبلیو بش جو کہ خود ایک جنگی جنون کے حامل انسان ہیں  کی انتظامیہ میں آرمز کنٹرول اور بین الاقوامی سیکورٹی امور کے شعبوں میں کام کیا۔

موصوف تجزیہ کار نے کہا کہ صدر بش کے وقت میں بھی جان بولٹن کے انتہائی مشکل نقطہ نظر کی وجہ سے امریکہ کو مشرق وسطی میں تباہ کن جنگوں کا سامنا  تھا۔

انہوں نے کہا  کہ سینیٹ کی خارجہ تعلقات کمیٹی سے پہلے یہ آدمی چند لوگوں کے ساتھ صرف اپنی اتھارٹی قائم رکھ سکا تھا اور اقوام متحدہ میں سفیر مقرر ہونے پر بہت سے لوگوں نے اس کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا۔

انہوں نے کہا کہ جان بولٹن امریکی فوج کے طاقت کو بہت زیادہ سمجھنے والا شخص ہے اسی لئے بعض افراد یہ دعوے بھی کرتے ہیں کہ امریکہ کی مشرقی وسطی اور دیگر جنگوں میں اس کا ہاتھ اور پشت پناہی رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ڈونالڈ ٹرمپ نے جان بولٹن کو دوبارہ حکومتی عہدہ دے کر بہت بڑی غلطی کی ہے اور یہ شخص ٹرمپ انتظامیہ کے لئے بھی ایک طرح سے خطرہ ثابت ہو گا۔

امریکی تجزیہ کار نے  کہا کہ جان بولٹن ٹرمپ کے قومی سلامتی کے معاملات میں ایک خطرناک عنصر کے طور پر سامنے آئے گا۔

انہوں نےمزید کہا کہ ایک سنجیدہ سوال جو ذہن میں آتا ہے وہ یہ ہے کہ ایسی کیا وجہ ہے کہ ڈونالڈ ٹرمپ نے جان بولٹن کو اس عہدے پر فائز کیا شاید اس لئے کہ یہ شخص عالمی برادری کی سوچ اور رائے کے بارے میں کچھ نہیں سوچتا۔


آپ کی رائے
نام:  
ایمیل:
پیغام:  500
 
. « »
قدرت گرفته از سایت ساز سحر