نیوزنور newsnoor

نیوزنور بین الاقوامی تحلیلی اردو خبررساں ادارہ

نیوزنور newsnoor

نیوزنور بین الاقوامی تحلیلی اردو خبررساں ادارہ

نیوزنور newsnoor
موضوعات
آرشیو
تازہ ترین تبصرے
  • ۸ جولای ۱۸، ۱۴:۲۰ - Siamak Bagheri
    :)
  • ۲۰ ژوئن ۱۸، ۱۴:۳۵ - Siamak Bagheri
    :)


رپورٹ :

 نیوزنور21جون/یمن میں سعودی عرب کی جانب سے تین سال سے جارحیت جاری ہےیمن میں حقیقی صورتحال سے صرف عالمی میڈیا ہی نہیں  بلکہ کئی مسلمان ممالک خاصکرپاکستانی میڈیا غافل رکھتا ہےاوراگر کوئی خبر نشر بھی کی جاتی ہے تو اس میں یمنیوں کو باغی کہا جاتا ہے۔

عالمی اردو خبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق یمن میں سعودی عرب کی جانب سے تین سال سے جارحیت جاری ہےیمن میں حقیقی صورتحال سے صرف عالمی میڈیا ہی نہیں  بلکہ کئی مسلمان ممالک خاصکرپاکستانی میڈیا غافل رکھتا ہےاوراگر کوئی خبر نشر بھی کی جاتی ہے تو اس میں یمنیوں کو باغی کہا جاتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق ستم ظریفی یہ ہے کہ عالمی میڈیا کہ جس پر صیہونیوں اور سامراجی طاقتوں کا غلبہ ہے کے ساتھ ساتھ پاکستانی الیکٹرونک و پرنٹ میڈیابھی اپنا مؤقف اختیار کرنے کی بجائے آل سعود کی زبان اور لہجہ اپنائے ہوئے ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جب آج سے کئی سو سال قبل کربلاء میں جنگ ہوئی تو یزید کے ذرائع ابلاغ نے عراق کے شہر کربلا میں شہید ہونے والے نواسہ رسول کے قیدی خانوادہ کو باغی کہا اور ہر جگہ یہ خبر پھیلائی گئی کہ باغیوں کا قافلہ شام میں داخل ہو رہا ہےاور اس جھوٹی خبر میں سات سو سے زائد صحافی یا کاتب استعمال ہوئےاگر چہ وقت ضرور بدل گیا ہے مگر سامراجی اور آمرانہ قوتوں کا مظلوموں کے خلاف پروپیگنڈہ کرنے کا انداز نہیں بدلا۔

رپرٹ میں کہا گیا ہے کہ موجودہ صورتحال کی بات کی جائے تو یمن پر امریکی، برطانوی اور اسرائیلی حمایت سے تین سال سے آل سعود کی جارحیت جاری ہے اس جارحیت سے 37 ہزار افراد شہید،زخمی اور معذور ہوئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق گذشتہ ایک ہفتہ سے یمن کے علاقے الحدیدہ میں جارحیت میں اضافہ ہوا ہےالحدیدہ وہ اہم بندرگاہ ہے جہاں سے یمنی عوام کے لئے غذائی اشیاء کی ترسیل کی جاتی ہے الحدیدہ پر حملوں سے ادویات سمیت امدادی اشیاء کی ترسیل بند ہوگئی ہے جس کے باعث علاقے میں مقیم افراد کی زندگیاں خطرے میں ہیں۔

رپورٹ کے مطابق آل سعود اور اس کی اتحادی جارح قوتیں یہ گمان کر رہی تھیں کہ الحدیدہ کی پرامن عوام ان کا راستہ نہیں روکے گی اور وہ آسانی سے علاقہ پر قبضہ کرسکتی ہیں لیکن یمنی عوام نے اعلان کیا ہے کہ الحدیدہ میں داخل ہونے والوں کو ہرگز واپس جانے کا راستہ نہیں ملے گا علماء یمن نے بھی وطن کے دفاع کے لئے جہاد کا اعلان کر دیا ہے دنیا بھر کے مسلمان پرامید ہیں کہ یمن میں جلد ظالم سرنگوں ہوگا اور مظلومین کو استقامت کی بدولت سنہری فتح حاصل ہوگی۔

نظرات  (۰)

ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں لکھا گیا ہے
ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی