نیوزنور newsnoor

نیوزنور بین الاقوامی تحلیلی اردو خبررساں ادارہ

نیوزنور newsnoor

نیوزنور بین الاقوامی تحلیلی اردو خبررساں ادارہ

نیوزنور newsnoor
موضوعات
آرشیو
تازہ ترین تبصرے
  • ۸ جولای ۱۸، ۱۴:۲۰ - Siamak Bagheri
    :)


فلسطینی سرکردہ سماجی کارکن:

 نیوزنور 05 جولائی /فلسطین کے ایک سرکردہ سماجی کارکن اور کلب برائے اسیران کے چیئرمین نے اسرائیل کی طرف سے فلسطینی قیدیوں اور شہداء کے اہل خانہ کو ملنے والی امداد بند کرانے کے قانون کی منظوری کو اسرائیلی ریاست کی طرف سے فلسطینیوں کے مالی حقوق پرڈاکہ قرار دیتے ہوئے کہاہےکہ فلسطینی اسیران کی کفالت کی مد دی جانے والی رقوم کی آڑ میں فلسطینی ٹیکسوں کی رقوم میں کٹوتی ناقابل معافی جرم ہےاسلئے عالمی برادری کو صہیونی ریاست کے اس اقدام کا سختی سے نوٹ لینا چاہیے۔

عالمی اردوخبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘کی رپورٹ کے مطابق فلسطین کے سرکردہ سماجی کارکن اور کلب برائے اسیران کے چیئرمین’’ قدرہ فارس ‘‘نے کہا کہ صہیونی ریاست کی طرف سے فلسطینی قوم کو دی جانے والی ٹیکسوں کی رقوم روکنا فلسطینیوں کے مالی حقوق پرڈاکہ زنی اور قذاقی ہے جس پر خاموش نہیں رہا جا سکتا ہے۔

انہو ں نے کہا کہ مسودہ قانون میں وزیرخزانہ کو فلسطینی اتھارٹی کو ادا کی جانے والی ٹیکسوں کی رقم میں سے اتنی رقم مہیاکرنے کا اختیار ہوگا جتنی فلسطینی شہداء اور اسیران کے اہل خانہ کی کفالت کے لیے فلسطینی اتھارٹی کی طرف سے ادا کی جاتی ہے۔

موصوف سماجی کارکن نے کہا کہ مسودہ قانون میں یہ وضاحت شامل ہے کہ فلسطینی اتھارٹی اپنے کل بجٹ کا سات فی صد جس کی مالیت 30 کروڑ ڈالرکے برابر ہے فلسطینی شہداء اور اسیران کے اہل خانہ کی کفالت پر خرچ کرتی ہےاور فلسطینی اتھارٹی یہ رقم یورپی یونین، امریکہ اور دوسرے ملکوں سے حاصل ہونے والی امداد سے استعمال کرتی ہے۔

یاد رہے کہ صہیونی وزراء نے مطالبہ کیا تھا کہ حکومت غزہ کی سرحد پر فلسطینیوں کے احتجاج کے دوران یہودیوں کی فصلوں کو ہونے والے نقصان کے ازالے کےلیے فلسطینی اتھارٹی کی ٹیکسوں کی رقم میں سے کٹوتی کرے۔

واضح رہے کہ کنیسٹ میں ایک آئینی بل پر تیسری رائے شماری کی ہے گئی رائے شماری کے دوران بل کے حق میں 87 اور مخالفت میں 15 ووٹ ڈالے گئے بل میں شامل اس شق کو ختم کردیا گیا جس میں فلسطینی ٹیکسوں کی رقوم میں کمی بیشی کا اختیار حکومت کو دیا گیا تھاقانون کی منظوری کےبعد اسرائیلی وزیر دفاع آوی گیڈور لائبرمین نے ارکان کو مبارک باد پیش کی اس قانون کی منظوری کے بعد فلسطینی اتھارٹی کو ٹیکسوں کی شکل میں دی جانے والی ایک بڑی رقم کاٹ لی جائے گی کیونکہ صہیونی حکام کا کہناہے کہ فلسطینی اتھارٹی اسرائیل سے ملنے والی رقم کا ایک بڑا حصہ اسرائیل پرحملے کرنے والے فلسطینیوں کے اہل خانہ کی کفالت پر صرف کرتی ہے۔

نظرات  (۰)

ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں لکھا گیا ہے
ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی