نیوزنور newsnoor

نیوزنور بین الاقوامی تحلیلی اردو خبررساں ادارہ

نیوزنور newsnoor

نیوزنور بین الاقوامی تحلیلی اردو خبررساں ادارہ

نیوزنور newsnoor
موضوعات
تازہ ترین تبصرے
  • ۱۱ ژانویه ۱۹، ۱۴:۱۱ - گروه مالی آموزشی برادران فرازی
    خیلی جالب بود


نیوزنور30جولائی/فرانس کے ایک اخبار نے اپنی ایک رپورٹ میں فرانس کے دارالحکومت پیریس میں اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد کا ایک آپریشن روم ہونے کا انکشاف کیا ہے اور فرانس کی خفیہ حکام کے ایک افسر سے نقل کرتے ہوئے لکھا ہے کہ پیریس موساد خفیہ ایجنسی کے کھیل کا میدان بن چکا ہے اور اس سے فرانس کے حکام مقابلہ نہیں کر سکتے ہیں ۔

عالمی اردو خبررساں ادارے’’نیوزنور‘‘ کی رپورٹ کے مطابق فرانس کے’’ لموند نیوز پیپر‘‘ نے اپنی ایک رپورٹ میں فرانس کے قلب میں صیہونی حکومت کی خفیہ ایجنسی کا بہت زیادہ نفوذ ہونے اور صیہونیوں کا اس نفوذ کے ذریعہ دہشتگردانہ آپریشن انجام دینے میں استفادہ کرنے کو فاش کیا ہے ۔

رپورٹ کے مطابق ایک خفیہ ایجنسی میں کام کرنے والے حکام نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا ہے کہ پیریس موساد خفیہ ایجنسی کے کھیل کا میدان بن چکا ہے اوروہ لوگ یہاں جارحانہ طریقہ سے اپنا کام انجام دے رہے ہیں ۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہودی النسل صیہونی حکومت کی خفیہ ایجنسی موساد پر کئی ہزار بے گناہ افراد کے قتل کرنے کے شواہد مل گئے ہیں۔

رپورٹ  کے مطابق صیہونی حکومت کی بدنام زمانہ خفیہ ایجنسی موساد نے صرف گذشتہ ایک دہائی میں پوری دنیا کے مختلف ممالک کے اندر 800 سے زائد دہشتگردانہ کاروائیاں انجام دی ہیں اوران کاروائیوں کے نتیجے میں کئی ہزار بے گناہ انسان مارے گئے ہیں جنکی تعداد کا اب تک کسی کو علم نہیں ہےیاتویہ افراد ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنے ہیں یا بمب دھماکوں میں مارے گئے ہیں اس کا بھی ابھی تک کسی کو علم نہیں ہے۔

رپورٹ میں لکھا گیا ہے کہ موساد کے ایجنٹ انسانوں کے قتل کیلئے مختلف حربے استعمال کرتے ہیں جن میں فائرنگ اور زہر کا استعمال جیسے اقدامات شامل ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ ایجنٹ کسی بھی شخص کے لباس، ٹوتھ پیسٹ یا اس کی ذاتی استعمال کی کسی بھی چیز کو زہریلا کرنے کے ذریعے اس کو موت کے گھاٹ اُتار دیتے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فلسطین کی مقاومتی تنظیم حماس کے ایک رہنما محمود المبحوح کو 2010ء میں دبئی کے ایک ہوٹل میں ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنایا گیاحماس کے اس رہنما کو ایک خاص قسم کی سرنج کے ذریعے اس کی گردن کے پچھلے حصے میں زہر کا ٹیکہ لگا کر شہید کیا گیااور ٹیکہ لگانے کے دو منٹ کے اندر یہ شخص اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا تھااورمیڈیکل چیک اپ میں محمود المبحوح کے جسم پر کسی قسم کا کوئی نشان نہیں پایا گیا جبکہ اس کو ٹارگٹ کرنے والے موساد کے ایجنٹ چند گھنٹوں میں دبئی سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے تھے۔

رپورٹ میں یاسر عرفات کے بارے میں لکھا گیاہے کہ 1968ء میں ایک فلسطینی قیدی کو اس خفیہ ایجنسی کے ذریعے بھرتی کیا گیا جس کو ایک سوئیڈن ماہر نفسیات ڈاکٹر کے ذریعے مائنڈ واش کے بعد مقبوضہ فلسطین کی اردن کے ساتھ مشترکہ سرحد کے نزدیکی علاقے میں بھیجا گیا تاکہ وہ فلسطینی تحریک آزادی کے چیئرمین یاسر عرفات کو ہدف بنا سکے لیکن اس نے فوری طور پر پلیس کے ساتھ رابطہ کر کے ان کو یاسر عرفات کے خلاف موساد کی تمام تر پلاننگ سے آگاہ کر دیا۔

رپورٹ میں مزید کہا گیاہے کہ اسی طرح ایک موساد کے افسر نے اٹلی کے خبرنگار کے روپ میں فلسطین کے فتح گروہ کے بڑے رہنما محمود همشری کو فرانس میں ان کے اپارٹ مینٹ میں بم سے شہید کر دیا ۔

موساد

نظرات  (۰)

ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں لکھا گیا ہے
ارسال نظر آزاد است، اما اگر قبلا در بیان ثبت نام کرده اید می توانید ابتدا وارد شوید.
شما میتوانید از این تگهای html استفاده کنید:
<b> یا <strong>، <em> یا <i>، <u>، <strike> یا <s>، <sup>، <sub>، <blockquote>، <code>، <pre>، <hr>، <br>، <p>، <a href="" title="">، <span style="">، <div align="">
تجدید کد امنیتی